سماجوادی پارٹی کو چوتھا جھٹکا ، ڈاکٹر اشوک باجپئی نے قانون سازکونسل سے دیا استعفی

Aug 09, 2017 07:10 PM IST | Updated on: Aug 09, 2017 07:10 PM IST

لکھنؤ: سماج وادی پارٹی (ایس پی) میں استعفی دینے کا سلسلہ ابھی تھم نہیں رہا ہے۔ ایس پی کو ایک اور جھٹکا اس وقت لگا جب یشونت سنگھ، بقل نواب، سروجنی اگروال کے بعد پارٹی کے سکریٹری جنرل ڈا کٹر اشوک باجپئی نے آج قانون ساز کونسل کی رکنیت سے استعفی دے دیا۔

ڈاکٹرباجپئی نے اپنا استعفی اسمبلی کے چیئرمین رمیش یادو کو پیش کیا ۔ ان کی مدت کار 30 جنوری 2021 تک تھی ۔ مانا جا رہا ہے کہ ڈاکٹر باجپئی بھی بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) میں شامل ہوں گے۔ ذرائع نے بتایا کہ ڈاکٹر باجپئی ہردوئی کے رہنے والے ہیں۔ ایس پی لیڈر اور راجیہ سبھا ممبر پارلیمنٹ نریش اگروال سے ان کا چھتیس کا آنکڑا ہے۔ انہیں ایس پی سرپرست ملائم سنگھ یادو کا قریبی سمجھا جاتا ہے۔

سماجوادی پارٹی کو چوتھا جھٹکا ، ڈاکٹر اشوک باجپئی نے قانون سازکونسل سے دیا استعفی

اتر پردیش میں اہم اپوزیشن پارٹی ایس پی کے چار اور بہوجن سماج پارٹی (بی ایس پی) کے ایک رکن کے استعفے کے بعد اب وزیر اعلی یوگی آدتیہ ناتھ اور ان کے چار وزراء کا ریاستی قانون ساز کونسل میں پہنچنے کا راستہ صاف نظر آ رہا ہے۔ سماج وادی پارٹی کے بقل نواب، یشونت سنگھ، سروجنی اگروال اور ڈاکٹر اشوک باجپئی اور بی ایس پی کے ٹھاکر جے ویر سنگھ کے استعفی سے قانون ساز کونسل کی پانچ نشستیں خالی ہو گئی ہیں۔ کونسل سے استعفی دینے والے سماج وادی پارٹی کے تین اور بی ایس پی کے ایک رکن پہلے ہی بی جے پی میں شامل ہو گئے ہیں۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز