سندیپ کی ماں نے کہا، اگر میرا بیٹا دہشت گرد ہے تو اسے سزا ملنی ہی چاہئے

Jul 12, 2017 12:01 PM IST | Updated on: Jul 12, 2017 12:01 PM IST

نئی دہلی۔ لشکر طیبہ کا دہشت گرد ہونے کے الزام میں جموں و کشمیر پولیس کی طرف سے گرفتار کئے گئے سندیپ شرما کی ماں نے کہا ہے کہ اگر ان کا بیٹا دہشت گرد ہے تو اسے سزا ملنی ہی چاہئے۔ پولیس نے بتایا کہ اتر پردیش میں انسداد دہشت گردی اسکواڈ (اے ٹی ایس) کی ایک ٹیم نے سندیپ کی ماں پاروتی اور ایک اور رشتہ دارریکھا سے پوچھ گچھ کی تھی، جنہیں پیر دیر رات حراست سے رہا کر دیا گیا۔

رہا ہونے کے بعد پاروتی نے مظفر نگر میں نامہ نگاروں سے کہا کہ اگر میرا بیٹا دہشت گرد ہے تو اسے سزا ملنی ہی چاہئے۔ اس کی حرکتوں کی وجہ سے ہمیں مسائل کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے اور شرمندگی اٹھانی پڑ رہی ہے۔ پاروتی اور ریکھا دونوں ہی ضلع میں گھریلو نوکر کا کام کرتی ہیں۔ پولیس نے بتایا کہ سندیپ سال 2012 میں ضلع سے چلا گیا تھا اور اس نے اپنے خاندان سے کہا تھا کہ وہ جموں میں ماہانہ 12000 روپے کما رہا ہے۔ سال 2007 میں اس کے والد کی موت ہو گئی تھی۔ اس کا بھائی ہردوار میں ٹیکسی چلاتا ہے۔ خواتین پولیس افسران کو اس کی رہائش گاہ پر تعینات کیا گیا ہے، وہ خاندان پر قریبی نظر رکھ رہی ہیں۔

سندیپ کی ماں نے کہا، اگر میرا بیٹا دہشت گرد ہے تو اسے سزا ملنی ہی چاہئے

جموں وکشمیر پولیس کی گرفت میں سندیپ شرما

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز