اترپردیش کے سرکاری اسکولوں میں ہفتہ کے روز پڑھائی نہیں، محض کھیل کود

May 13, 2017 04:42 PM IST | Updated on: May 13, 2017 04:42 PM IST

لکھنؤ۔ اترپردیش حکومت نے فیصلہ کیا ہے کہ اسکولوں میں سنیچر کے روز پڑھائی نہیں کریں گے بلکہ موج مستی کریں گے۔ یوپی کے نائب وزیراعلی دنیش شرما نے آج یہاں دعویٰ کیا کہ بچوں کے ٹیچر کے ساتھ تعلقات کو خوشگوار بنانے کے علاوہ ان کی شخصیت کے تمام پہلووں کو بہتر بنانے پر توجہ دی جائے گی۔ مسٹر شرما نے جو سیکنڈری اور ہائر ایجوکیشن کے وزیر بھی ہیں کل یہاں یوپی اور ہریانہ کے تعلیمی افسران کے ساتھ ایک میٹنگ میں اس تجویزپر غور کیا کہ سنیچر کے روز اسکول کے طلبا بغیر کتابوں کے اسکول آئیں۔ ایسا کرنے سے ان بچوں کو بہت راحت محسوس ہوگی جو بھاری بھاری بیگ لے کر اسکول آتے ہیں جس سے ان کے سر ،گردن،کمر اور ٹانگو ں میں درد ہوتا ہے۔

مختلف سروے میں پایا گیا ہے کہ بچے ایسے بیگ اٹھاکر اسکول آتے ہیں جو ان کے اپنے وزن کا 30 سے 40 فیصد ہوتا ہے جبکہ رہنما اصولوں کے مطابق بچہ کا بیگ اس کے اپنے وزن کا محض 10 فیصد ہونا چاہئے۔ وزن کی وجہ سے بچے ٹیڑھے ہوکر چلتے ہیں ۔ اس لئے کم از کم ایک دن انہیں بوجھ سے نجات دینے کے بارے میں سوچا گیا ہے۔ مگر ٹیچر تنظیموں کی اس تجویز پر رائے مختلف ہے۔ یوپی مادھیامک شکشک سنگھ کے ریاستی سکریٹری آر پی مشرا نے کہا ’’چونکہ سنیچر کے روز پڑھائی نہیں ہوگی تو بہت سے والدین اپنے بچوں کو اسکول ہی نہیں بھیجیں گے۔ ہمارا مقصد بچوں کو کھیل کود میں مصروف کرنا ہے مگر والدین انہیں گھر میں ہی رکھیں گے۔

اترپردیش کے سرکاری اسکولوں میں ہفتہ کے روز پڑھائی نہیں، محض کھیل کود

علامتی تصویر

مسٹر مشرا نے کہا ’’سنیچر کو آدھے وقت پڑھائی اور آدھے وقت کھیل کود کے اچھے نتائج برآمد ہونگے اس سے دونوں مقصد حاصل ہوجائیں گے۔ کچھ پڑھائی ہوگی ساتھ ہی بچے موج مستی بھی کریں گے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز