شعبۂ عربی جامعہ ملیہ اسلامیہ میں معماران جامعہ ملیہ اسلامیہ کے عنوان پر ایک روزہ سیمینار کا انعقاد

شعبۂ عربی جامعہ ملیہ اسلامیہ کے انجمن طلبہ کی جانب سے بی۔اے اور ایم اے کے طلبہ و طالبات کے لیے ایک سیمنار کا انعقاد کیا گیا۔

Nov 25, 2017 09:42 PM IST | Updated on: Nov 25, 2017 09:42 PM IST

نئی دہلی : شعبۂ عربی جامعہ ملیہ اسلامیہ کے انجمن طلبہ کی جانب سے بی۔اے اور ایم اے کے طلبہ و طالبات کے لیے ایک سیمنار کا انعقاد کیا گیا۔ سیمنار کے افتتاحی تقریب میں تلاوت کلام پاک کے بعد افتتاحی جلسہ کے ناظم ڈاکٹر محفوظ الرحمن نے انجمن طلبہ کا تعارف کراتے ہوئے انجمن طلبہ کی سرگرمیوں کوبیان کیا اور سیمنار کے موضوع کی وضاحت کی۔ پروگرام میں مہمان خصوصی کی حیثیت سے پروفیسر شفیق احمد خان ندوی نے شرکت کی ، تعارفی کلمات کے بعد مہمان خصوصی اور صدر شعبہ کو شعبۂ عربی کی دو طالبات نے گلدستہ پیش کرکے ان کا استقبال کیا۔ اس کے بعد پروگرام کے صدر پروفیسر حبیب اللہ خان ،صدر شعبۂ عربی نے اپنے افتتاحی کلمات میں انجمن طلبہ کو مبارک باد پیش کی اور ان کے قدم کو ایک مبارک قدم بتایا، انھوں نے اپنے خطاب میں کہا کہ طلبہ درس میں بہت کچھ سیکھتے ہیں لیکن اس سے کہیں زیادہ وہ اس طرح کے پروگراموں میں شریک ہوکرسیکھتے ہیں۔ انھوں نے طلبہ کو برابر اس طرح کے پروگراموں میں حصہ لینے پر ابھارا اور ان کو مزید محنت کرنے پر زور دیا جس سے ان کی شخصیت سازی میں کافی مدد ملے گی۔ انھوں نے کہا کہ ہم اساتذہ کی یہی کوشش ہوتی ہے کہ طلبہ کی شخصیت کو نکھارنے کے لیے برابر مختلف پروگراموں کا اہتمام کریں اور طلبہ اس سے خاطر خواہ استفادہ کر سکیں۔

اس کے بعد پروفیسر شفیق احمد خان ندوی نے اپنا کلیدی خطبہ پیش کیا جس میں انھوں نے جامعہ کی تاریخ بیان کرتے ہوئے جامعہ کے قیام کے مقاصد اور معماران جامعہ کی قربانیوں کو یاد کیا ، نیز طلبہ و طالبات کو تعلیم میدان میں اپنے سفر کو جاری رکھنے کی نصیحت کی۔ انھوں نے اپنے کلیدی خطبہ میں اپنے طالب علمی کے زمانے کی یادوں کو ذکر کیا جب وہ خود اس جامعہ میں طالب علم تھے اور جامعہ کے ذمہ داران کے ساتھ بیتے ہوئے لمحات کو بھی یاد کیا ۔نیز جامعہ کے شعبۂ عربی میں انجمن طلبہ کے قیام کی داستان بیان کرتے ہوئے یہ بتایا کہ کس طرح اس کے پروگرام منعقد ہوا کرتے تھے ۔ اس زمانہ میں جب وہ طالب علم تھے تو انجمن کے ایک پروگرام میں ان کو اول مقام حاصل کرنے پر ایک مشہور سوری شاعر عمر ابو ریشہ کے ہاتھوں انعام پانے کا موقع بھی ملا۔ اس جلسہ میں ایک کتاب ’’عظمت شبلی ‘‘ مرتبہ ڈاکٹر اورنگ زیب اعظمی کا اجرا بھی عمل میں ٓیا ، افتتاحی پروگرام کے آخر میں ایڈوائزر انجمن طلبہ ڈاکٹر اورنگ زیب اعظمی نے مہمان خصوصی ، صدر شعبہ اور اساتذہ کرام اور دیگر حاضرین کا شکر یہ ادا کیا۔

شعبۂ عربی جامعہ ملیہ اسلامیہ میں معماران جامعہ ملیہ اسلامیہ کے عنوان پر ایک روزہ سیمینار کا انعقاد

افتتاحی پروگرام کے بعد ۳ متوازی جلسے ہوئے جس میں ۲۵ سے زائد طلبہ و طالبات نے اپنے مقالات پیش کیے، جس میں خاص طور پر ڈاکٹر ذاکر حسین اور جامعہ کی فلاح و بہبود میں ان کا حصہ، شیخ الہند مولانا محمود الحسن :حیات و کارنامے،مہاتمہ گاندھی اورجامعہ ملیہ اسلامیہ اور مولانا محمد علی جوہر اورجامعہ کے لیے ان کی خدمات جیسے عناوین قابل ذکر ہیں۔ ان اجلاس کی صدارت شعبۂ عربی کے اساتذہ پروفیسر عبدالماجد قاضی، ڈاکٹر نسیم اختر، ڈاکٹر فوزان احمد ، ڈاکٹر ہیفاء شاکری، ڈاکٹرصہیب عالم نے کی۔ اس پراگرام کو منعقد کرنے میں ڈاکٹر ہیفاء شاکری ، ڈاکٹر عظمت اللہ، ڈاکٹر محفوظ الرحمن نے بھر پور حصہ لیا۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز