روہنگیا مسلمانوں کو دہشت گردی سے نتھی کرنا روئے زمین پر انسانیت کے ساتھ ظلم عظیم : سید علی شاہ گیلانی

بزرگ علیحدگی پسند رہنما اور حریت کانفرنس (گ) چیئرمین سید علی گیلانی نے حکومت ہندوستان کی طرف سے میانمار کے روہنگیا مسلمانوں کے حوالے سے سپریم کورٹ میں پیش کردہ حلف نامے پر اپنی گہری تشویش کا اظہار کیا

Sep 19, 2017 10:40 PM IST | Updated on: Sep 19, 2017 10:41 PM IST

سری نگر: بزرگ علیحدگی پسند رہنما اور حریت کانفرنس (گ) چیئرمین سید علی گیلانی نے حکومت ہندوستان کی طرف سے میانمار کے روہنگیا مسلمانوں کے حوالے سے سپریم کورٹ میں پیش کردہ حلف نامے پر اپنی گہری تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ نسلی اور مذہبی بنیادوں پر مصیبت زدہ مہاجرین اور پناہ گزینوں کو انسانی ہمدردی کی بناء پر مدد کرنے کے بجائے انہیں دہشت گردی سے نتھی کرنا روئے زمین پر انسانیت کے ساتھ ایک ظلم عظیم سے تعبیر کیا جانا چاہیے۔

انہوں نے کہا کہ عالمی سطح پر معروف نوبل انعام یافتہ میانمار کی خاتون سربراہ آنگ سان سوچی کی حکومت نے روہنگیا مسلمانوں کے خلاف روا رکھی گئی قتل وغارت اور جبرواکراہ کی ظالمانہ کارروائیوں کی جہاں دنیا بھر کے مہذب اقوام مذمت کرنے میں پیش پیش ہیں، وہیں پر بھارتی حکومت کی طرف سے روہنگیائی پناہ گزینوں کے زخموں پر نمک پاشی کرنے کے لیے انہیں ’’پاکستان کی دہشت گردی‘‘ سے جوڑنے کی بزدلانہ کوشش کی گئی ہے۔ حریت چیئرمین نے حکومت ہندوستان کے بقول ان کے متعصبانہ اور غیر انسانی رویہ اختیار کئے جانے پر اظہار افسوس کرتے ہوئے کہا ہے کہ بھارت کو ہر مسئلے میں پاکستان کو ملوث کرنے کی لت پڑ گئی ہے، ورنہ روہنگیا مسلمانوں اور (بقول حکومت ہندوستان) ’’پاکستان کی دہشت گردی‘‘ کا آپس میں دُور کا بھی واسطہ نہیں ہے۔

روہنگیا مسلمانوں کو دہشت گردی سے نتھی کرنا روئے زمین پر انسانیت کے ساتھ ظلم عظیم : سید علی شاہ گیلانی

علاحدگی پسند رہنما اور حریت کانفرنس (گ) چیئرمین سید علی گیلانی: فائل فوٹو

حریت راہنما نے اس امر پر بھی افسوس کا اظہار کیا کہ ہندوستان ایک طرف اقوام متحدہ کی جنرل کونسل کی مستقل ممبرشپ حاصل کرنے کا درخواست گزار بنا ہوا ہے اور دوسری جانب اقوامِ متحدہ کے زیر سایہ انسانی حقوق کے کمیشن یو این ایچ آر سی کی طرف سے پناہ گزینوں کے ساتھ انسانی ہمدردی کے ناطے نیک سلوک کرنے کے قواعد وضوابط پر عمل کرنے کے برخلاف پناہ گزینوں کے ساتھ سختی سے نمٹنے کی دھمکیاں دینا سامراجی ذہنیت کا عکاس ہے۔ انہوں نے دنیا بھر کے مظلوم اقوام کے ساتھ بلا لحاظ رنگ ونسل، ذات پات اور مذہب، عدل وانصاف کے تقاضوں کو پورا کرنا اقوامِ متحدہ کے انسانی حقوق کے چارٹر کے عین مطابق ہونا چاہیے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز