حزب المجاہدین سربراہ صلاح الدین کو عالمی دہشت گرد قرار دیے جانے کے خلاف علیحدگی پسند وں کا احتجاج کا اعلان

Jun 29, 2017 09:49 PM IST | Updated on: Jun 29, 2017 09:49 PM IST

سری نگر: کشمیری علیحدگی پسند قیادت سید علی گیلانی، میرواعظ مولوی عمر فاروق اور محمد یاسین ملک نے متحدہ جہاد کونسل اور حزب المجاہدین کے سربراہ سید صلاح الدین کو امریکہ کی جانب سے عالمی دہشت گرد قرار دیے جانے کے خلاف 30 جون جمعتہ المبارک کو بعد از نماز احتجاج کرنے کی کال دی ہے۔ انہوں نے الزام لگایا ہے کہ امریکہ کی جانب سے یہ اعلان ہندوستان کی خوشنودی حاصل کرنے کے لئے کیا گیا ہے۔

علیحدگی پسند قیادت نے جمعرات کو یہاں جاری ایک مشترکہ بیان میں کہا ’اپنے پیدائشی اور عالمی سطح پر تسلیم شدہ حق ، حق خودارادیت کے لئے جدوجہد کرنے والوں کو دہشت گرد قرار دینا حق و انصاف کے مسلمہ اصولوں کے منافی ہے‘۔ انہوں نے کہا کہ یہ بڑے افسوس کی بات ہے کہ مسٹر نریندر مودی کے دورۂ امریکہ کے دوران بجائے اس کے کہ امریکی صدر ان سے کشمیر میں ظلم و زیادتی اور حقوق انسانی کی خلاف وزیاں بند کرنے پر زور دیتا انہوں نے اس پر خاموشی اختیار کی جو ایک جائز جدوجہد میں مصروف قوم کے تئیں نا انصافی کے مترادف ہے ۔

حزب المجاہدین سربراہ صلاح الدین کو عالمی دہشت گرد قرار دیے جانے کے خلاف علیحدگی پسند وں کا احتجاج کا اعلان

مسٹر گیلانی، میرواعظ اور یاسین ملک نے کہا کہ کشمیری عوام گزشتہ 70 برسوں سے ایک جائز حق کے حصول کے لئے مصروف جدوجہد ہیں اور اس دوران ہندوستان کی جانب سے یہاں کے عوام کو بدترین مظالم کا نشانہ بنایا گیا ۔ انہوں نے الزام لگایا کہ طاقت اور تشدد کے بل پر یہاں کے عوام کو زیر کرنے کے لئے ہر غیر جمہوری اور غیر اخلاقی حربہ آزمایا گیا اور حقوق انسانی کی خلاف ورزیوں کے ریکارڈ مات کئے گئے۔

علیحدگی پسند قائدین نے کہا کہ یہ ہندوستان کی کشمیر دشمن اور ظلم و جبر سے عبارت پالیسیوں کا ردعمل ہے کہ کشمیری عوام سراپا احتجاج بن گئے ہیں۔ دریں اثنا مسٹر گیلانی، میرواعظ اور یاسین ملک نے پولیس اور انتظامیہ کی طرف سے علیحدگی پسند قائدین کے خلاف دیے گئے بیانات کو بے بنیاد اور حقائق سے عاری قرار دیتے ہوئے کہا کہ اس طرح کے بیانات کا مقصد مزاحمتی قائدین کی پر امن سرگرمیوں پر پابندیوں کے لئے بہانے تلاش کرنے کے سوا کچھ نہیں ۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز