Live Results Assembly Elections 2018

بابری مسجد -رام مندر تنازع : 16 نومبر کو اجودھیا جائیں گے شری شری روی شنکر ، فریقوں سے کریں گے ملاقات

بابری مسجد -رام مندر تنازع کو آپسی گفت و شنید سے حل کرنے کیلئے اب آرٹ آف لیونگ کے بانی شری شری روی شنکر 16 نومبر کو اجودھیا کا دورہ کریں گے ، جہاں وہ ہندو اور مسلم دونوں ہی فریقوں سے ملاقات کرکے اس معاملہ پر تبادلہ خیال کریں گے ۔

Nov 13, 2017 01:35 PM IST | Updated on: Nov 13, 2017 01:35 PM IST

فیض آباد : بابری مسجد -رام مندر تنازع کو آپسی گفت و شنید سے حل کرنے کیلئے اب آرٹ آف لیونگ کے بانی شری شری روی شنکر 16 نومبر کو اجودھیا کا دورہ کریں گے ، جہاں وہ ہندو اور مسلم دونوں ہی فریقوں سے ملاقات کرکے اس معاملہ پر تبادلہ خیال کریں گے ۔خیال رہے کہ اس سے پہلے 11 نومبر کو نرموہی اکھاڑہ کے دنیندر داس نے بنگلور میں شری شری روی شنکر سے ملاقات کی تھی ۔ بتایا جاتا ہے کہ داس نے شری شری سے اجودھیا تنازع میں ثالثی کیلئے اجودھیا آنے کی گزارش بھی کی تھی۔

اطلاعات کے مطابق شری شری روی شنکر 15 نومبر کو لکھنو میں کچھ فریقوں سے بات چیت کرنے کے بعد 16 نومبر کو اجودھیا میں ہندو اور مسلم فریقوں سے ملاقات کریں گے اور ان سے مل کر درمیانی راستہ راشتہ کرنے کی کوشش کریں گے۔ اس میٹنگ میں مسلم فریقوں کو بھی مدعو کیا گیا ہے۔

بابری مسجد -رام مندر تنازع : 16 نومبر کو اجودھیا جائیں گے شری شری روی شنکر ، فریقوں سے کریں گے ملاقات

خیال رہے کہ اترپردیش شیعہ سینٹرل وقف بورڈ کے چیئرمین سید وسیم رضوی بھی بنگلورو میں شری شری روی شنکر سے ملاقات کرچکے ہیں ۔ ملاقات کے بعد وسیم رضوی نے کہا تھا کہ ہم اجودھیا میں ہی رام مندر کی تعمیر کے حق میں ہیں۔

خیال رہے کہ سپریم کورٹ نے سبھی فریقوں سے کہا تھا کہ بہتر ہوگا کہ سب آپس میں مل کر بات کریں اور کوئی حل نکال لیں ۔ تاہم زیادہ تر فریقوں کا کہنا ہے کہ آپسی سمجھوتہ سے حل مشکل ہے ۔ حال ہی میں شری شری روی شنکرنے اس معاملہ میں ثالثی کی پیشکش کی تھی ۔ تاہم اس کی شدید مخالفت بھی کی گئی تھی ۔ اس معاملہ پر سپریم کورٹ میں سماعت دسمبر میں ہوگی۔

Loading...

Loading...

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز