بی ایچ یو تشدد : 1200 طالبات کے خلاف ایف آئی آر ، لنکا تھانہ کا ایس او لائن حاضر ، سی او کی بھی چھٹی

Sep 25, 2017 10:53 AM IST | Updated on: Sep 25, 2017 12:20 PM IST

وارانسی : بنارس ہندو یونیورسٹی میں ہفتہ کی رات طالبات پرلاٹھی چارج کے معاملہ میں ریاست کے وزیر اعلی یوگی آدتیہ ناتھ نے جانچ کے احکامات دئے ہیں ۔ اس سلسلہ میں جہاں پولیس نے تقریبا 1200 نامعلوم طالبات کے خلاف مقدمہ درج کیا ہے ، وہیں یوگی حکومت نے کارروائی کرتے ہوئے لنکا تھانہ کے ایس او راجیو سنگھ کو لائن حاضر کردیا ہے جبکہ بھیلوپور علاقہ کے سی او نویش کٹاریا اور ایڈیشنل سٹی مجسٹریٹ کو ہٹادیا گیا ہے۔ ادھر طالبات اب بی ایچ یو اور وارانسی کے دیگر کالجوں سے جانے بھی لگی ہیں ۔

ادھر کانگریس اور سماجوادی پارٹی نے طالبات پر لاٹھی چارج کو لے کر بی جے پی اور یوگی حکومت کی جم کر تنقید کی ہے۔ کانگریس کے نائب صدر راہل گاندھی نے طالبات پر لاٹھی چارج کو بی جے پی کی بیٹی بچاؤ، بیٹی پڑھاؤ مہم سے جوڑتے ہوئے بی جے پی کو شدید تنقید کا نشانہ بنایا۔ انہوں نے ٹوئٹ کیا کہ بی ایچ یو کیس بیٹی بچاؤ، بیٹی پڑھاؤ کا بی جے پی ورژن۔ انہوں نے بی ایچ یو میں چھیڑخانی کے خلاف طالبات کے احتجاج کے دوران ان پر طاقت کے استعمال کی سخت مذمت کرتے ہوئے بی جے پی سرکار کو شدید تنقید کا نشانہ بنایا۔

بی ایچ یو تشدد : 1200 طالبات کے خلاف ایف آئی آر ، لنکا تھانہ کا ایس او لائن حاضر ، سی او کی بھی چھٹی

سماج وادی پارٹی کے صدر اور یوپی کے سابق وزیر اعلی اکھلیش یادو نے بھی ٹویٹ کرکے بی ایچ یو کی طالبات پر لا ٹھی چارج کی سخت مذمت کی۔انہوں نے بات چیت کے ذریعہ مسئلہ کا حل او رقصورواروں کے خلاف کارروائی کا مطالبہ کیا۔

خیال رہے کہ کل رات بی ایچ یو میں چھیڑخانی کے معاملہ پر طالبات کے احتجاج کے دوران پرتشدد واقعات ہوئے جس میں کئی طالبات اور پولیس اہلکار زخمی ہوئے۔ پولیس افسران کے مطابق یونیورسٹی احاطہ میں حالات کشیدہ لیکن قابو میں ہیں۔احتیاطی اقدامات کے طور پر بڑی تعداد میں پولیس کو تعینات کیا گیا ہے اور آنے جانے والوں پر سخت نگرانی رکھی جارہی ہے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز