صداتی انتخابات : اعداد و شمار ہمارے حق میں نہیں ، لیکن جنگ پوری طاقت کے ساتھ لڑنی ضروری : سونیا گاندھی

Jul 16, 2017 09:58 PM IST | Updated on: Jul 16, 2017 09:58 PM IST

نئی دہلی: کانگریس صدر سونیا گاندھی نے موجودہ حالات پر گہری تشویش کا اظہار کرتے ہوئے آج کہا کہ ملک کا آئین اور قانون خطرے میں ہے اور اپوزیشن جماعتوں کے صدر اور نائب صدر کے عہدے کے امیدوار ہمیں اس خطرے سے باہر نکالنے کے انتہائی اہل ثابت ہوں گے۔ محترمہ گاندھی نے صدارتی انتخابات کی شام اپوزیشن پارٹیوں کے ممبران پارلیمنٹ کے اجلاس میں اپوزیشن کے صدارتی امیدوار میرا کمار اور نائب صدر کے عہدے کے امیدوار گوپال كرشن گاندھی کا تعارف کراتے ہوئے کہا کہ دونوں رہنما تجربہ کار اور آئین کے ماہرین ہیں اور وہ ملک کو اس خطرے سے باہر نکال سکتے ہیں اور ملک کے بہترین صدر اور بہترین نائب صدر ثابت ہو سکتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ملک کے حالات انتہائی تشویشنا ک ہیں۔ ملک کا مستقبل اور آئینی اقدار داؤ پر ہیں اور ان کی حفاظت کرنا ، ان اصولوں کو ماننے والوں کی ذمہ داری ہے۔ انہوں نے کہا کہ اگرچہ اس انتخاب میں اعداد و شمار ہمارے حق میں نہیں ہوں لیکن جنگ پوری طاقت کے ساتھ ضرور لڑی جانی چاہئے۔ہندوستان کو ان لوگوں کے رحم و کرم پر نہیں چھوڑ سکتے جو ملک پر تنگ نظریے اور پھوٹ ڈالنے والی فرقہ وارانہ سوچ مسلط کرنا چاہتے ہیں۔

صداتی انتخابات : اعداد و شمار ہمارے حق میں نہیں ، لیکن جنگ پوری طاقت کے ساتھ لڑنی ضروری : سونیا گاندھی

کانگریس صدر نے کہا کہ اپوزیشن کے ممبران پارلیمنٹ کی یہ میٹنگ نہ صرف ملک کی تکثیریت جمہوریت کی حفاظت کے لئے بلکہ اپوزیشن کے اتحاد اور اشتراکی سوچ کو ظاہر کرتی ہے۔ مخصوص امیدواروں کے لئے اپوزیشن جماعتوں کے ممبران پارلیمنٹ کی موجودگی اس بات کو یقینی بناتی ہے کہ ہمدردومعاون، بردبار اور تکثیریت کی روایت ہندوستان کے لئے صحیح معنوں میں عظیم روایت ہے ۔ اس کی بقا جدوجہد ہے اور اس جدوجہد سے ہم پیچھے نہیں ہٹیں گے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز