الیکشن کمیشن پہنچے ایس پی سپریمو ملائم سنگھ یادو، سائیکل پر اپنے حق کا کیا دعوی

Jan 02, 2017 11:51 PM IST | Updated on: Jan 02, 2017 11:51 PM IST

نئی دہلی: سماج وادی پارٹی (ایس پی) کے اکھلیش خیمہ کی طرف سے صدر کے عہدے سے ہٹائے جانے کے بعد ملائم سنگھ یادو نے آج الیکشن کمیشن سے ملاقات کرکے پارٹی کے نام اور انتخابی نشان سائیکل پر اپنا دعوی ٹھوک دیا۔ مسٹر ملائم سنگھ یادو کے ساتھ ان کے بھائی شیو پال یادو، راجیہ سبھا ممبر پارلیمنٹ امر سنگھ اور سابق ممبر پارلیمنٹ جیہ پردا شام ساڑھے چار بجے الیکشن کمیشن پہنچے اور کمیشن کو ایک میمو رنڈم سونپ كر یہ دعوی پیش کیا۔ مسٹر ملائم سنگھ یادو اور ان کے حامیوں کی الیکشن کمیشن کے ساتھ تقریبا 45 منٹ تک بات چیت ہوئی۔

اس میٹنگ کے بعد مسٹر ملائم سنگھ یادو اور ان کے رفقاء صحافیوں سے ملے بغیر چلے گئے۔ کمیشن کے مرکزی دروازے کے پاس بڑی تعداد میں پرنٹ اور الیکٹرانک میڈیا کے نامہ نگار کئی گھنٹے سے کھڑے تھے لیکن مسٹر ملائم سنگھ اور ان کے ساتھ آنے والے لیڈران پچھلے دروازے سے نکل گئے۔ ذرائع کے مطابق اسی مسئلے پر کل اکھلیش خیمہ کے لیڈران مسٹر رام گوپال یادو کی قیادت میں الیکشن کمیشن سے ملاقات کریں گے۔

الیکشن کمیشن پہنچے ایس پی سپریمو ملائم سنگھ یادو، سائیکل پر اپنے حق کا کیا دعوی

ذرائع کے مطابق مسٹر ملائم سنگھ یادو نے کمیشن سے درخواست کی ہے کہ اتر پردیش اسمبلی الیکشن میں انہیں اپنی پارٹی کا نام اور انتخابی نشان استعمال کرنے کی اجازت دی جائے کیونکہ سرکاری طور پر وہیں پارٹی کے صدر ہیں۔انہوں نے دعوی کیا کہ پوری پارٹی ان کے ساتھ ہے۔ الیکشن کمیشن جانے سے پہلے مسٹر ملائم سنگھ یادو نے یہاں اپنی رہائش گاہ پر اپنے حامیوں کے ساتھ تبادلہ خیال کیا کہ پارٹی کے انتخابی نشان سائیکل کو کیسے بچایا جائے۔

اتر پردیش کے وزیر اعلی اکھلیش یادو اور مسٹر رام گوپال یادو کی طرف سے کل لکھنؤ میں منعقدہ ایس پی کے قومی اجلاس میں مسٹر ملائم سنگھ یادو کو پارٹی کے قومی صدر کے عہدے سے ہٹا کر سرپرست بنایا گیا تھا۔ کانفرنس میں مسٹر اکھلیش یادو کو نیا قومی صدر قرار دیا گیا تھا۔جبکہ مسٹر ملائم سنگھ یادو نے اس اقدام کو غیر آئینی اور غیر قانونی قرار دیا ہے۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ اتر پردیش اسمبلی الیکشن نزدیک ہے اور الیکشن کمیشن صورتحال کی نزاکت کو دیکھتے ہوئے دونوں فریقوں کو نئے نام اور نئے انتخابی نشان الاٹ کر سکتا ہے۔ سابق چیف الیکشن کمشنر ایس وائی قریشی نے کہا ہے کہ غالبا سماج وادی پارٹی کے انتخابی نشان پر روک لگائی جا سکتی ہے اور دونوں فریقوں کو عارضی طور پر نئے نشان دیے جا سکتے ہیں۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز