شری شری روی شنکر کی یوگی سے ملاقات، مندر کی تعمیر پر تبادلہ خیال

لکھنؤ۔ اجودھیا کے مسجد ۔ مندر تنازعہ کو صلح،سمجھوتےسے حل کرنے کی جاری کوششوں کے درمیان آج روحانی گرو شری شری روی شنکر نے وزیر اعلی یوگی آدتیہ ناتھ سے ملاقات کی۔ قابل اعتماد ذرائع کے مطابق تقریباً چالیس منٹ تک ہونے والی بات چیت کے دوران مندر کی تعمیر کے سلسلے میں غور و خوض کیا گیا۔ سپریم کورٹ نے حال ہی میں کہا تھا کہ مندر مسجد تنازعہ کا تصفیہ عدالت سے باہر صلح سمجھوتے سےہو جائے تو بہتر رہے گا اورعدالت بھی اس میں مدد کو تیار رہے گی۔

Nov 15, 2017 11:34 AM IST | Updated on: Nov 15, 2017 11:34 AM IST

لکھنؤ۔  اجودھیا کے مسجد ۔ مندر تنازعہ کو صلح،سمجھوتےسے حل کرنے کی جاری کوششوں کے درمیان آج روحانی گرو شری شری روی شنکر نے وزیر اعلی یوگی آدتیہ ناتھ سے ملاقات کی۔ قابل اعتماد ذرائع کے مطابق تقریباً چالیس منٹ تک ہونے والی بات چیت کے دوران مندر کی تعمیر کے سلسلے میں غور و خوض کیا گیا۔ سپریم کورٹ نے حال ہی میں کہا تھا کہ مندر مسجد تنازعہ کا تصفیہ عدالت سے باہر صلح سمجھوتے سےہو جائے تو بہتر رہے گا اورعدالت بھی اس میں مدد کو تیار رہے گی۔

شری شری روی شنکر دوپہرمیں تقریباً ایک بجے شیعہ سینٹرل وقف بورڈ کے چیئرمین وسیم رضوی سے بھی ملیں گے۔ مسٹر رضوی  بھی اس تاریخی معاملہ کو بات چیت سے حل کرنے کے لئے ادھر کچھ دنوں سے کوششوں کو تیز کر چکے ہیں۔ انہوں نے دو دن پہلے اجودھیا جا کر رام جنم بھومی ٹرسٹ کے چیئرمین نرتیہ گوپال داس، ٹرسٹ کے رکن سریش داس، آل انڈیا اکھاڑہ پریشد کے صدر مهنت نریندر گری اور کچھ دیگر سنتوں سے ملاقات کی تھی۔ انہوں نے حل کے لیے تیار مسودے میں کہا تھا کہ رام للا کے مقام پر خوبصورت رام مندر کی تعمیر ہو اور مسجد اجودھیا سے باہر مسلم اکثریتی علاقے میں بنے۔ مسجد کا نام بابر کے نام پر نہیں رکھا جائے۔ مسٹر رضوی کے مطابق سادھو سنتوں نے ان  مسودے پر اتفاق کیا تھا۔ اس کے بعد وہ الہ آباد گئے اور وہاں مسٹر گری سے ان کی اکیلے میں لمبی بات چیت ہوئی۔

شری شری روی شنکر کی یوگی سے ملاقات، مندر کی تعمیر پر تبادلہ خیال

شری شری روی شنکر دوپہرمیں تقریباً ایک بجے شیعہ سینٹرل وقف بورڈ کے چیئرمین وسیم رضوی سے بھی ملیں گے۔

دوسری طرف، مندر مسجد تنازعہ سے منسلک دو اہم تنظیموں وشو ہندو پریشد (وی ایچ پی) اور آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ نے واضح طور پرکہہ دیا ہے کہ اس مسئلہ کا حل صرف عدالت سے ہی ہو سکتا ہے۔ بات چیت سے اس تنازعہ کا تصفیہ ابھی ممکن ہی نہیں ہے۔ مسلم پرسنل لا بورڈ کے سیکرٹری اور تنازعہ کے ایک اہم فریق سنی سینٹرل وقف بورڈ کے وکیل ظفریاب جیلانی نے کہا کہ معاملہ سپریم کورٹ میں زیر غور ہے اب وہیں فیصلہ ہوگا۔ بات چیت سے اس مسئلہ کا حل نہیں ہو سکتا کیونکہ معاملہ بہت آگے بڑھ گیا ہے۔ وی ایچ پی کے شرد شرما کا کہنا ہے کہ لوگ سرخیوں میں آنے کے لئے بات چیت سے حل کرنے کی کوششوں کا ڈھنڈورا پیٹ رہے ہیں۔ اب تک کئی لوگوں نے اس قضیہ کو بات چیت سے حل کیلئے کوشش کی۔ میڈیا میں بیان دیئے، لیکن نتیجہ صفر رہا۔

ان کا کہنا تھا کہ سابق وزیر اعظم آنجہانی چندر شیکھر کے عہد میں صلح معاہدے کی مثبت پہل ہوئی تھی، لیکن دوسری طرف اپنے موقف پر اڑے رہنے کی وجہ سے سمجھوتہ نہیں ہو سکا۔ اس دوران، روی روی شنکر کا شیعہ سینٹرل وقف بورڈ کے چیئرمین اور ارکان سے ملنے کا پروگرام ہے۔ وہ مسلم پرسنل لا بورڈ کے رکن مولانا خالد رشید فرنگی محلی سے بھی ملاقات کر سکتے ہیں۔ اس کے بعد وہ اجودھیا جائیں گے۔ اجودھیا میں دھرم آچاريوں اور تنازعہ سے منسلک فریقین سے کل ملاقات کریں گے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز