سپریم کورٹ نے سابق سی اے جی ونود رائے کی صدارت میں بی سی سی آئی کی چار رکنی انتظامی کمیٹی کا کیا اعلان

ونود رائے کے علاوہ اس انتظامی کمیٹی میں سینئر مؤرخ رام چندر گہا، آئی ڈی ایف سی کے چیئرمین وکرم لميے اور ہندوستانی خاتون کرکٹ ٹیم کی سابق کپتان ڈائنا ایدلجي کو بھی شامل کیا گیا ہے

Jan 30, 2017 05:36 PM IST | Updated on: Jan 30, 2017 06:00 PM IST

نئی دہلی : سپریم کورٹ نے بی سی سی آئی کے لئے چار رکنی انتظامی کمیٹی تشکیل کی ہے۔ سابق کنٹرولر آڈیٹر جنرل ونود رائے کو اس انتظامی کمیٹی کا صدر بنایا گیا ہے۔ ونود رائے کے علاوہ اس انتظامی کمیٹی میں سینئر مؤرخ رام چندر گہا، آئی ڈی ایف سی کے چیئرمین وکرم لميے اور ہندوستانی خاتون کرکٹ ٹیم کی سابق کپتان ڈائنا ایدلجي کو بھی شامل کیا گیا ہے۔

سپریم کورٹ نے اس کمیٹی کے رکن کے طور پر وزارت کھیل کے سکریٹری کو شامل کرنے کے مرکزی حکومت کے مطالبہ کو خارج کر دیا ۔ حکم کے مطابق بی سی سی آئی کے جوائنٹ سکریٹری امیتابھ چودھری اور وکرم لميے بین الاقوامی کرکٹ کونسل میں بی سی سی آئی کی نمائندگی کریں گے۔ سپریم کورٹ نے وزراء اور سرکاری حکام کے بی سی سی آئی میں عہدے نہ سنبھالنے کے اپنے سابقہ فیصلہ کے تناظر میں یہ فیصلہ سنایا ہے۔

سپریم کورٹ نے سابق سی اے جی ونود رائے کی صدارت میں بی سی سی آئی کی چار رکنی انتظامی کمیٹی کا کیا اعلان

قبل ازیں معاملہ کی سماعت 24 جنوری کو ہوئی تھی۔ اٹارنی جنرل مکل روہتگی سپریم کورٹ کے سابقہ فیصلہ کی مخالفت کر رہے تھے۔ واضح رہے کہ سپریم کورٹ نے لودھا کمیٹی کی سفارشات کو نافذ کرنے کو لے کر سال بھر سے زیادہ وقت سے جاری کیس میں اپنا آخری فیصلہ سناتے ہوئے بی سی سی آئی کے صدر انوراگ ٹھاکر اور سکریٹری اجے شرکے کو چیف ایگزیکٹو کو عہدے سے ہٹا دیا تھا۔

دو جنوری کو سپریم کورٹ نے کہا تھا کہ انوراگ ٹھاکر اور شرکے نے اس کے 18 جولائی 2016 کے حکم پر عمل نہیں کیا تھا۔ اس سے پہلے سپریم کورٹ نے گزشتہ سال 18 جولائی کو بی سی سی آئی کو بہتر بنانے کے لئے جسٹس لوڈھا کمیٹی کی سفارشات کو منظور کیا تھا۔

Loading...

Loading...

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز