سپریم کورٹ کا تاج محل میں باہر کے لوگوں کو نماز کی اجازت دینے سے انکار

Jul 09, 2018 01:38 PM IST | Updated on: Jul 09, 2018 01:38 PM IST

نئی دہلی۔ سپریم کورٹ نے آج تاریخی تاج محل میں ’’باہر سے آئے لوگوں ‘‘ کو نماز پڑھنے کی اجازت دینے کی عرضی مسترد کردی۔ عدالت عظمی کی ایک سہ رکنی بنچ نے جس کی صدارت چیف جسٹس آف انڈیا دیپک مشرا کررہے تھے، اس عرضی کو مسترد کردیا جس میں درخواست کی گئی کہ وہاں باہر سے آنے والوں کو نماز پڑھنے کی اجازت دی جائے اور اس سلسلے میں ضلعی حکام کو ہدایات جاری کی جائیں۔

سپریم کورٹ نے کہا کہ تاج محل دنیا کے سات عجوبوں میں شامل ہے لہذا اس کی حفاظت لازمی ہے۔ عرضی گذار نے 24 جنوری کو ضلعی مجسٹریٹ کی طرف سے تاج محل میں باہر کے لوگوں کو نماز کی اجازت نہ دینے پر سپریم کورٹ سے رجوع کیا تھا۔

سپریم کورٹ کا تاج محل میں باہر کے لوگوں کو نماز کی اجازت دینے سے انکار

تاج محل: فائل فوٹو

سپریم کورٹ نے کہا کہ تاج محل میں نماز پڑھنے کی کوئی ضرورت نہیں ، نماز کہیں اور بھی پڑھی جا سکتی ہے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز