عام آدمی پارٹی سے برخاست امانت اللہ خان حکومت کی کمیٹیوں کے بنے سربراہ

May 06, 2017 12:03 PM IST | Updated on: May 06, 2017 12:03 PM IST

نئی دہلی۔ دہلی میں اروند کیجریوال حکومت نے جمعہ کو اسمبلی میں مختلف کمیٹیوں کا اعلان کیا۔ عام آدمی پارٹی سے معطل رکن اسمبلی امانت اللہ خان کو اسمبلی کی کمیٹیوں میں اہم ذمہ داری سونپی گئی ہے۔ انہیں کل چھ کمیٹیوں میں جگہ دی گئی ہے۔ ان کے علاوہ گزشتہ سال فحش سی ڈی واقعہ میں وزیر کے عہدے سے برخاست کئے گئے سندیپ کمار کو بھی درج فہرست ذات اور درج فہرست قبائل کی کمیٹی کا ممبر بنایا گیا ہے۔

اسمبلی کی ایس سی / ایس ٹی کمیٹی میں ممبر اسمبلی سندیپ کمار کو رکھا گیا ہے۔ بتا دیں کہ سی ڈی اسکینڈل میں نام آنے کے بعد انہیں وزیر کے عہدے سے ہٹا دیا گیا تھا۔

عام آدمی پارٹی سے برخاست امانت اللہ خان حکومت کی کمیٹیوں کے بنے سربراہ

اوکھلا سے عام آدمی پارٹی کے رکن اسمبلی امانت اللہ خان: فائل فوٹو

خاص بات یہ ہے کہ کمیٹیوں میں کمار وشواس کے قریبی ممبران اسمبلی کے پتے کاٹ دئیے گئے ہیں۔ سومناتھ بھارتی، الکا لامبا اور راجیش رشی جیسے ممبران اسمبلی کو جگہ نہیں ملی ہے۔ وہیں، پريولیج کمیٹی کے چیئرمین رہے سومناتھ بھارتی کو ہٹا کر ان کی جگہ کیلاش گہلوت کو دی گئی ہے۔ کمار وشواس کے قریبی ممبران اسمبلی الکا لامبا، آدرش شاستری، سومناتھ بھارتی اوربھاونا گوڑ کو صرف لائبریری کمیٹی میں رکن کے طور پر رکھا گیا ہے۔

سندیپ کمار سندیپ کمار

سی ڈی کی وجہ سے گنوانی پڑی تھی وزارت

بتا دیں کہ آپ ممبر اسمبلی سندیپ کمار دہلی حکومت میں خواتین و اطفال کی بہبود و ترقی کے وزیر تھے۔ ستمبر 2016 میں ایک سی ڈی وائرل ہوئی، جس میں وہ دو عورتوں کے ساتھ قابل اعتراض حالت میں تھے۔ ان پر الزام لگا تھا کہ انہوں نے راشن کارڈ بنوانے کے بہانے خواتین کا استحصال کیا۔ سی ڈی سامنے آنے کے بعد اروند کجریوال نے انہیں حکومت اور پارٹی سے برخاست کر دیا تھا۔

 

 

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز