ایل او سی پر پھر کشیدگی، پاکستان فائرنگ سے ایک فوجی اور ایک 6 سالہ بچی ہلاک

Jul 17, 2017 01:37 PM IST | Updated on: Jul 17, 2017 02:42 PM IST

جموں۔  جموں وکشمیر کے راجوری اور پونچھ اضلاع میں لائن آف کنٹرول پر پاکستانی فوج کی فائرنگ سے ایک فوجی جوان اور ایک کمسن بچی ہلاک ہوگئے ہیں۔ اس کے علاوہ ایک خاتون اور ایک فوجی اہلکار سمیت دو دیگر افراد کے زخمی ہونے کی اطلاعات ہیں۔ وزارت دفاع کے ترجمان نے بتایا ’پاکستانی فوج کی طرف سے پیر کی صبح ساڑھے سات بجے پونچھ کے بمبرگلی سیکٹر میں ایل او سی پر ہلکے و خودکار ہتھیاروں اور مارٹروں سے بلااشتعال اور اندھا دھند گولہ باری کا سلسلہ شروع کیا گیا‘۔ انہوں نے بتایا ’ہماری فوج سرحد پار سے ہونے والی گولہ باری کا موثر اور منہ توڑ جواب دے رہی ہے‘۔

سرکاری ذرائع نے بتایا کہ جموں وکشمیر لائٹ انفینٹری سے وابستہ نائیک مدثر احمد اُس وقت شدید زخمی ہوگیا جب ایک مارٹر شیل اس کے بنکر پر گرآیا۔ انہوں نے بتایا کہ اگرچہ زخمی مدثر کو فوری طور پر نذدیکی طبی مرکز منتقل کیا گیا، تاہم وہ زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے دم توڑ گیا۔سرکاری ذرائع نے بتایا کہ 37 سالہ مدثر احمد کا تعلق جنوبی ضلع پلوامہ کے ترال سے تھا۔ انہوں نے بتایا کہ مدثر کے پسماندگان میں بیوی شاہینہ مدثر اور دو بچے شامل ہیں۔ پاکستانی فائرنگ کے نتیجے میں دوسرے ایک فوجی اہلکار کے بھی زخمی ہونے کی اطلاع ہے۔ اس دوران پولیس نے بتایا کہ6 سالہ ساجدہ کفیل ساکنہ بہروٹی محلہ دادینانہ اُس وقت جاں بحق ہوئی جب پاکستان کی طرف سے پونچھ کے بالاکوٹ سیکٹر میں داغا گیا مارٹر اس کے گھر پر جاگرا۔ انہوں نے بتایا کہ سرحد پار سے ہونے والی گولہ باری کے نتیجے میں ضلع راجوری کے نائکہ علاقہ میں شاہ بی نامی ایک خاتون زخمی ہوئی ہے جس کو علاج ومعالجہ کے لئے اسپتال میں داخل کرایا گیا ہے۔ ایک سرکاری عہدیدار نے بتایا کہ ضلع مجسٹریٹ راجوری نے ایل او سی کے نذدیک تمام اسکولوں کو اگلے احکامات تک بند رکھنے کے احکامات جاری کردیے ہیں۔

ایل او سی پر پھر کشیدگی، پاکستان فائرنگ سے ایک فوجی اور ایک 6 سالہ بچی ہلاک

انہوں نے بتایاکہ کچھ سرحدی دیہاتی احتیاطی طور پر کیمپوں میں منتقل ہوگئے ہیں۔ ضلع مجسٹریٹ راجوری ڈاکٹر شاہد اقبال چودھری اور ایس ایس پی راجوری یوگل کمار منہاس نے پیر کی صبح گولہ باری سے متاثرہ منجاکوٹ کا دورہ کرکے متاثرین سے بات چیت کی۔ ضلع مجسٹریٹ نے اس موقعے پر نامہ نگاروں سے بات کرتے ہوئے کہا کہ گولہ باری کے نتیجے میں دو عام شہری شدید طور پر زخمی ہوئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ایل او سی کے نذدیک واقع اسکولوں اگلے احکامات تک بند کیا گیا ہے۔ مسٹر چودھری نے کہا کہ گولہ باری میں ٹھہراؤ پیدا ہونے کے بعد لوگوں کو محفوظ مقامات کی طرف منتقل کیا جائے گا۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز