فرقہ وارانہ ہم آہنگی: وادی کے ہزاروں مسلمانوں نے کشمیری پنڈت کی آخری رسوم ادا کی

Jul 15, 2017 09:21 AM IST | Updated on: Jul 15, 2017 09:21 AM IST

سری نگر۔ وادی کشمیرکے مسلمانوں نے ایک بار پھر فرقہ وارانہ ہم آہنگی کی ایک مثال پیش کی ہے۔ پلوامہ میں ایک کشمیری پنڈت کی آخری رسوم میں شامل ہو کرہزاروں مسلمانوں نے اتحاد اوربھائی چارے کا پیغام دیا ہے۔ مسلم اکثریتی ترچل گاؤں میں رہنے والے کشمیری پنڈت 50 سالہ تیز کشن ڈیڑھ سال سے بیمار تھے۔ جمعہ کو ان کی موت ہو گئی تو مسلم کمیونٹی کے لوگ بڑی تعداد میں ان کے گھر پہنچے۔ مسلمانوں نے ہندو رسم رواج کے مطابق، آخری رسوم ادا کرنے میں سوگوار خاندان کی پوری مدد کی۔

مردہ تیز کشن کے بھائی جانکی ناتھ پنڈتا نے کہا، 'یہ اصلی کشمیر ہے۔ یہ ہماری ثقافت ہے اور ہم بھائی چارے کے ساتھ رہتے ہیں۔ ہم تقسیم کی سیاست میں یقین نہیں رکھتے۔ ' 90 کی دہائی میں جب کشمیری دہشت گردی کی وجہ سے لاکھوں کشمیری پنڈت وادی سے نقل مکانی کر گئے تب تیز کشن نے یہیں آباد رہنے کا فیصلہ کیا۔

فرقہ وارانہ ہم آہنگی: وادی کے ہزاروں مسلمانوں نے کشمیری پنڈت کی آخری رسوم ادا کی

فوٹو کریڈٹ: رائزنگ کشمیر ڈاٹ کام

نو بھارت ٹائمس ڈاٹ کام کے مطابق، پڑوسی محمد یوسف نے کہا، 'آخری رسوم میں شامل زیادہ تر لوگ مسلم تھے۔ ہم نے ان کی آخری رسوم ادا کی۔ ہم ہندو اور مسلمانوں کو بانٹنے کی کوشش میں ہونے والے واقعات کی مذمت کرتے ہیں۔ ہم یہاں امن اور پیار ومحبت سے رہتے ہیں۔ ' تیز کشن کے ایک اور رشتہ دار نے بتایا کہ اس گاؤں میں لوگ بغیر کسی فرقہ وارانہ کشیدگی کے رہتے ہیں۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز