ہزاروں سوگواروں کی موجودگی میں جامعہ اسلامیہ سنابل دہلی کے سینئر استاذ ، استاذ الاساتذہ مولانا محمد الیاس سلفی سپرد خاک

Nov 05, 2017 11:14 AM IST | Updated on: Nov 05, 2017 08:40 PM IST

نئی دہلی : معروف دینی دانش گاہ جامعہ اسلامیہ سنابل دہلی کے سینئر استاذ ، استاذالاساتذہ مولانا محمد الیاس سلفی نے تقریبا سترہ ایام تک موت وزيست كي كشمكش میں مبتلا رہ کر آج مورخہ 5 نومبر 2017 بروز اتوار صبح 7:05 بجے لوک نائک ہاسپٹل دہلی میں آخری سانس لی ۔ ان کی عمر تقریبا 9 سال تھی ۔ ابولکلام آزاد اسلامک اویکننگ سنٹر کے سربراہ مولانا محمد رحمانی نے ان کی نماز جنازه جامعه اسلاميه سنابل کے عیدگاہ میں بعد نماز عصر پڑھائی اورتدفین ابو الفضل انکلیو کے نئے قبرستان میں عمل میں آئی ۔

نماز جنازہ میں مولانا محمد رحمانی ، مرکزی جمعیت اہل حدیث ہند کے امیر مولانا اصغر علی مہدی سلفی ، جنرل سکریٹری مولانا محمد ہارون سنابلی ، مرکز اور اس سے وابستہ ادارے جامعہ اسلامیہ سنابل کے ذمہ داران ، اساتذہ اور طلبہ ، دہلی میں مقیم سنابل کے سیکڑوں فضلا ، مولانا شیث تیمی ، جمعیت اہل حدیث ہند (نئی ) کے مولانا صلاح الدین مقبول اور علاقہ کی معزز شخصیات سمیت ہزاروں افراد نے شرکت کی اور نم آنکھوں کے ساتھ مولانا کو الوداع کہا۔

ہزاروں سوگواروں کی موجودگی میں جامعہ اسلامیہ سنابل دہلی کے سینئر استاذ ، استاذ الاساتذہ مولانا محمد الیاس سلفی سپرد خاک

قابل ذکر ہے مولانا تقریبا تیرہ دنوں تک الشفا اسپتال میں آئی سی یو میں زیر علاج تھے اور اس کے بعد ان کولوک نائک اسپتال منتقل کردیا گیا تھا ۔ شوگر زیادہ ہونے کی وجہ سے لقوے کا اثر ہوگیا تھا ، وہ مسلسل بے ہوشی کے عالم میں تھے اور سترہ دنوں تک موت و زیست کی کشمکش میں مبتلا رہنے کے بعد آج انہوں نے داعی اجل کو لبیک کہہ دیا ۔

مولانا عبدالبر سنابلی مدنی نے نیوز 18 اردو کو بتایا کہ مولانا الیاس سلفی کا تعلق یوپی کے ضلع بلرام پور میں لکشمی نگر سے تھا اور وہ ابولکلام آزاد اسلامک اویکننگ سنٹر اور جامعہ اسلامیہ سنابل سے کافی عرصہ تک وابستہ تھے ۔ ان کے شاگردوں کی ایک طویل فہرست ہے ، ملک و بیرون ملک دینی و تدریسی خدمات انجام دے رہے ہیں۔ مولانا 1982 میں جامعہ اسلامیہ سنابل سے وابستہ ہوئے اور تا حیات یہیں پر اپنی علمی و تدریسی خدمات انجام دیں ۔ گرچہ اس دوران انہوں نے لکھنو و دیگر مقامات پر اپنی خدمات پیش کیں ۔

maulana ilyas funeral 2

مولانا کے پسماندگان میں تین صاحبزادے اور ایک صاحبزادی ہیں ۔ مولانا کے ایک بیٹے عبدالسلام سلفی ہیں ، جو فی الحال جامعہ سنابل میں ہی لائبریرین ہیں ۔ مولانا کے دوسرے مولانا عبد الصبور سنابلی مدنی ہیں ، جو سعودی عرب میں دینی خدمات انجام دے رہیں ۔جبکہ تیسرے بیٹے عبد الصمد ایک میڈیکل اسٹور چلاتے ہیں ۔ مولانا کی ایک صاحبزادی بھی ہیں ۔

ابولکلام آزاد اسلامک اویکننگ سنٹرکے صدر مولانا محمد رحمانی نے ان کے انتقال پر اپنے گہرے رنج و غم کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ اللہ ان کی خدمات اور ان کے اخلاص کو قبول فرمائے ، ان کے شاگردوں کے طویل سلسلہ کو ان کے لئے صدقہ جاریہ بنائے ، ان کی مغفرت فرمائے اور پسماندگان کو صبر جمیل کی توفیق عطا کرے۔

مولانا سلفی کے انتقال کے بعد سوشل میڈیا سائٹس وہاٹس ایپ اور فیس بک پر بھی تعزیت کے اظہار کا سلسلہ جاری ہے ۔ ان کے شاگرد اور ان سے وابستہ افراد اپنی اپنی تعزیتوں کا اظہار کررہے ہیں ۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز