سی بی آئی ڈائریکٹر عہدے سے ہٹائے جانے کے بعد آلوک ورما نے توڑی چپی، کہا ایمانداری کی ملی سزا، سبھی الزام جھوٹے

پی ایم مودی کی قیادت والی سیلیکشن کمیٹی نے بد عنوانی اور کام کاکج میں لاپرواہی برتنے کے الزام میں جمعرات کو ورما کو عہدے سے ہٹا دیا۔

Jan 11, 2019 09:38 AM IST | Updated on: Jan 11, 2019 10:27 AM IST

ہائی پاور سیلیکشن کمیٹی کی جانب سے سی بی آئی ڈائریکٹر کے عہدے سے ہٹائے جانے کے بعد آلوک ورما نے دعوی کیا ہے کہ ان کا تبادلہ ان کی مخالفت میں رہنے والے ایک شخص کی طرف سے لگائے گئے جھوٹے ،فرضی الزاموں کی بنیاد پر کیا گیا ہے۔ پی ایم مودی کی قیادت والی سیلیکشن کمیٹی نے بد عنوانی اور کام کاکج میں لاپرواہی برتنے کے الزام میں جمعرات کو ورما کو عہدے سے ہٹا دیا۔ا س معاملے میں چپی توڑتے ہوئے آلوک ورما نے جمعرات کی دیر رات  کو پی ٹی آئی کو جاری ایک بیان میں کہا کہ بدعنوانی کے ہائی ۔پروفائل معاملوں کی جانچ کرنے والی اہم ایجنسی ہونے کے ناطے سی بی آئی کی آزادی کو محفوظ رکھنا چاہئے۔

ورما نے کہا " اسے باہری دباؤ کے بغیر کام کرنا چاہئے۔ میں نے ایجنسی کی  سالمیت کو برقراررکھنے کی پوری کوشش کی جبکہ اسے برباد کرنے کی کوشش کی جا رہی  تھی۔

سی بی آئی ڈائریکٹر عہدے سے ہٹائے جانے کے بعد آلوک ورما نے توڑی چپی، کہا ایمانداری کی ملی سزا، سبھی الزام جھوٹے

سی بی آئی سربراہ آلوک ورما: فائل فوٹو

Loading...

اسے مرکزی حکومت اور سی سی سی کے 23 اکتوبر 2018 کے احکام میں دیکھاجا سکتا ہے جو بغیر کسی اختیار کے دئے گئے تھے اور جنہیں رد کر دیا گیا'۔ ورما نے اپنے مخالف کے ذریعے لگائے گئے جھوٹے اور فرضی الزاموں کی بنیاد پر کمیٹی کی جانب سے تبادلہ کا حکم جاری کئے جانے پر دکھ و افسوس ظاہر کیا ہے۔

Loading...