تین طلاق کے 'دو زخم': پہلے شوہر نے چھوڑا تو دوسرے نے فون پر رشتہ توڑا

Apr 24, 2017 01:55 PM IST | Updated on: Apr 24, 2017 01:55 PM IST

غازی آباد۔ اترپردیش کے مختلف علاقوں میں تین طلاق کے چونکانے والے معاملے سامنے آ رہے ہیں۔ غازی آباد میں دو بہنوں کو ان کے شوہر (دونوں سگے بھائی) نے سعودی عرب سے ہی طلاق دے دی۔ ایک بہن کو اس کے شوہر نے خط لکھ کر طلاق دیا تو دوسرے کو شوہر نے صرف فون پر طلاق کہہ کر رشتہ ختم کر لیا۔ اس دوران سلطان پور میں تین طلاق کا درد جھیل رہی عورت کو انصاف کے لئے عجیب وغریب طریقہ اپنانا پڑا۔ ہفتہ کو طلاق کا درد جھیل چکی اس خاتون نے انصاف کے لئے ایس پی آفس کے سامنے سڑک پر لیٹ کر مظاہرہ کیا۔

متاثرہ خاتون کا کہنا ہے کہ کچھ وقت پہلے اس کے شوہر نے بیرون ملک سے فون پر اس کو طلاق دے دی تھی۔ اب وہ گزارا بھتہ دینے سے انکار کر رہا ہے۔ ایسے میں وہ انصاف کے لئے اپنے بیٹے کے ساتھ ادھر ادھر بھٹک رہی ہے۔ دراصل، یہ معاملہ ہے بلدی رائے تھانہ علاقہ کے نندولی گاؤں کا ، جہاں اسی گاؤں کی رہنے والی نسرین کا نکاح قریب 12 سال پہلے كڑوار تھانہ علاقہ کے دھراواں کے رہنے والے حسیب خان کے ساتھ ہوا تھا۔ نکاح کے بعد دونوں کو ایک بیٹا بھی ہوا، لیکن کچھ تنازعہ کے چلتے حسیب نے اسے تین سال بعد ہی طلاق دے دی۔ طلاق کے بعد حسیب نے اسے گھر سے نکال دیا۔

تین طلاق کے 'دو زخم': پہلے شوہر نے چھوڑا تو دوسرے نے فون پر رشتہ توڑا

اپنے تین سال کے بچے کو لے کر گھوم رہی نسرین نے عدالت کا سہارا لیا اور گزارہ بھتہ کی اپیل کی۔ گزارے کے لئے وہ چکر لگا رہی تھی کہ اس کے اوپر دوسری شادی کر لینے کا دباؤ پڑنے لگا۔ بعد میں جب زیادہ دباؤ پڑا تو حسیب اور اس اہل کے خانہ نے زبردستی سال 2014 میں اس کا نکاح گوسائی گنج تھانہ علاقہ کے گالب شهيد کے ذاکر سے کرا دیا۔ کچھ دنوں پہلے ذاکر نے بھی اسکو سعودی عرب سے فون پر طلاق دے دی۔ اب  انصاف کے لئے وہ عورت بھٹک رہی ہے۔ حکام کے چکر لگاتے لگاتے جب کوئی انصاف نہ ملا تو ہفتہ صبح وہ پولیس سپرنٹنڈنٹ کے دفتر کے سامنے پہنچ گئی اور درمیان سڑک پر لیٹ کر انصاف کی فریاد لگانے لگی۔ ابھی یہ پتہ نہیں چل پایا ہے کہ پولیس نے اس معاملے میں اسے کیا یقین دہانی کرائی ہے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز