Live Results Assembly Elections 2018

جنوبی کشمیر میں 14 گھنٹہ طویل تصادم ختم ، 2 جنگجو ہلاک ، ایک جوان شہید ، پانچ زخمی ، صورتحال انتہائی کشیدہ

سرینگر۔ جنوبی کشمیر کے پلوامہ ضلع میں شدید انکاؤنٹر میں دو جنگجو مارے گئے جبکہ سیکورٹی فورسز کا ایک جوان بھی شہید ہو گیا۔

Mar 05, 2017 09:24 AM IST | Updated on: Mar 05, 2017 12:19 PM IST

سری نگر:  جنوبی کشمیر کے ضلع پلوامہ کے ترال میں جنگجوؤں اور سیکورٹی فورسز کے مابین کم از کم 14 گھنٹوں تک جاری رہنے والی شدید جھڑپ حزب المجاہدین (ایچ ایم) سے وابستہ دو جنگجوؤں کی ہلاکت پر ختم ہوگئی ہے۔ جھڑپ کے دوران جموں وکشمیر پولیس کے اسپیشل آپریشن گروپ (ایس او جی) کا ایک کانسٹیبل شہید جبکہ ایک میجر سمیت 5 سیکورٹی فورس اہلکار زخمی ہوگئے ہیں۔ آخری اطلاعات ملنے تک علاقہ میں کامبنگ آپریشن (تلاشی آپریشن) جاری تھا۔

ترال کے مختلف علاقوں میں مقامی لوگوں اور سیکورٹی فورسز کے مابین جھڑپوں کا سلسلہ وقفہ وقفہ سے گذشتہ شام سے جاری ہے جس کے سبب ایسے علاقوں میں صورتحال انتہائی کشیدہ بنی ہوئی ہے۔ سرکاری ذرائع نے بتایا کہ ترال کے ہفو نازنین پورہ نامی گاؤں میں جنگجوؤں کی موجودگی سے متعلق خفیہ اطلاع ملنے پر سیکورٹی فورسز اور ریاستی پولیس کے ایس او جی نے گذشتہ شام مذکورہ گاؤں میں تلاشی آپریشن شروع کیا۔ تاہم جب سیکورٹی فورسز گاؤں کو محاصرے میں لے رہے تھے تو وہاں موجود جنگجوؤں نے ان پر ہینڈ گرینیڈ پھینکے اور بندوقوں سے اندھا دھند فائرنگ شروع کی۔

جنوبی کشمیر میں 14 گھنٹہ طویل تصادم ختم ،  2 جنگجو ہلاک ، ایک جوان شہید ، پانچ زخمی ، صورتحال انتہائی کشیدہ

سرکاری ذرائع نے بتایا کہ سیکورٹی فورسز نے جوابی فائرنگ کی جس کے بعد طرفین کے مابین باضابطہ طور پر جھڑپ کا آغاز ہوا۔ انہوں نے بتایا کہ اندھیرے کی وجہ سے گذشتہ رات آپریشن روک دیا گیا اور جنگجوؤں کو فرار ہونے سے روکنے کے لئے گاؤں کو چاروں اطراف سے سیل کیا گیا۔ اتوار کی صبح روشنی کی پہلی کرن کے ساتھ ہی محصور جنگجوؤں کے خلاف آپریشن بحال کیا گیا۔

سیکورٹی ذرائع نے بتایا کہ جھڑپ کے دوران ریاستی پولیس کے ایس او جی سے وابستہ کانسٹیبل منظور احمد جاں بحق ہوا جبکہ ایک میجر سمیت پانچ سیکورٹی فورس اہلکار زخمی ہوئے جنہیں علاج ومعالجہ کے لئے اسپتالوں میں داخل کرایا گیا ہے۔ منظور احمد ضلع بارہمولہ کے اوڑی کا رہنے والا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ جھڑپ کے مقام سے دو جنگجوؤں کی لاشیں برآمد کی گئی ہیں۔ مقامی لوگوں نے بتایا کہ انہوں نے اتوار کی صبح دھماکوں کی لرزہ خیز آوازیں سنیں۔ انہوں نے بتایا کہ سیکورٹی فورس اہلکار لوگوں کو اپنے گھروں سے باہر آنے کی اجازت نہیں دے رہے تھے۔

Loading...

رپورٹوں کے مطابق جس رہائشی مکان میں جنگجو محصور تھے، کو دھماکہ خیز مواد سے اڑا دیا گیا ہے۔ اگرچہ ہفو نازنین پورہ اور اس سے ملحقہ دیہات کے لوگوں نے گذشتہ شام جھڑپ کے مقام کی جانب جانے کی کوشش کی، تاہم سیکورٹی فورسز نے آنسو گیس کے شیلوں اور شدید لاٹھی چارج کا استعمال کرکے اس کوشش کو ناکام بنادیا۔

موصولہ اطلاعات کے مطابق ترال کے مختلف علاقوں میں احتجاجی مظاہرین اور سیکورٹی فورسز کے مابین جھڑپوں کا سلسلہ وقفہ وقفہ سے جاری ہے۔ سیکورٹی ذرائع نے بتایا کہ علاقہ میں امن وامان کی صورتحال کو بنائے رکھنے کے لئے سیکورٹی فورسز کی اضافی نفری تعینات کی گئی ہے۔ احتجاجی مظاہروں کے دوران قصبہ ترال کے بس اسٹینڈ میں گذشتہ شام احتجاجی نوجوانوں نے ایک سینٹرل ریزرو پولیس فورس (سی آر پی ایف) اہلکار پر حملے کرکے اس کی سروس رائفل چھین لی۔  پولیس ذرائع نے بتایاکہ احتجاجی نوجوانوں نے مذکورہ سی آر پی ایف اہلکاروں پر لاٹھیوں سے حملہ کیا جس کے نتیجے میں وہ شدید زخمی ہوگیا۔ اسے علاج ومعالجہ کے لئے سب ضلع اسپتال ترال میں داخل کرایا گیا ہے۔

Loading...

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز