یوپی اسمبلی انتخات : ایم آئی ایم نے 11 امیدواروں کی فہرست جاری کی ، اویسی کا مغربی یوپی کا کل سے تین روزہ دورہ

Jan 12, 2017 07:35 PM IST | Updated on: Jan 12, 2017 07:35 PM IST

لکھنؤ ( حمیداللہ صدیقی ) :الیکشن کی تاریخوں کے اعلان کے ساتھ ہی اترپردیش میں سیاسی درجہ حرارت ساتویں آسمان پر ہے۔ دیگر اہم جماعتوں کے ساتھ ساتھ آل انڈیا مجلس اتحاد المسلمین بھی متحرک نظر آرہی ہے۔ ایم آئی ایم کے صدر اسدالدین اویسی کل سے مغربی اترپردیش کا تین روزہ دورہ شروع کر رہے ہیں۔ ان کی نظریں ان سیٹوں پر مرکوز ہیں ، جہاں مسلمانوں کا ووٹ فیصلہ کن حیثیت میں ہے۔ اسدالدین اویسی کا ماننا ہے کہ دادری اور مظفرنگر جیسے واقعات کے بعدمسلمانوں میں اپنی قیادت کے فقدان کا احساس ہوا ہے ، جس کا فائدہ انہیں اگلے اسمبلی انتخابات ملےگا ، جبکہ دیگر جماعتوں کا کہنا ہےکہ بہار کی طرح اترپردیش میں بھی ایم آئی ایم کو خاطرخواہ فائدہ نہیںہوگا۔

آل انڈیا مجلس اتحاد المسلمین کے صدر اسدالدین اویسی 14،13،اور15 جنوری کو مغربی اترپردیش کا دورہ کر رہے ہیں۔پہلے اور دوسرے مرحلے کے انتخابات کےلئے ان کی پارٹی نے 11 امیدوار بھی میدان میں اتارے ہیں۔ ان کی پارٹی بھلے ہی سرکار بنانے کی پوزیشن میں نہ ہو ، لیکن ممکنہ سرکارمیں عمل دخل ضرورچاہتی ہے۔

یوپی اسمبلی انتخات : ایم آئی ایم نے 11 امیدواروں کی فہرست جاری کی ، اویسی کا مغربی یوپی کا کل سے تین روزہ دورہ

قابل ذکر ہے کہ اترپردیش میں تقریباً 122 سیٹوں پر مسلمانوں کی آبادی 20 فیصد سے زائد ہے اور60 سیٹوں پر30 فیصد سے زائد۔ ایک درجن سیٹوں پرتو ان کی آبادی 40 سے52 فیصد تک ہے۔ ایم آئی ایم کی نظرانہیں سیٹوں پر مرکوز ہے ، جہاں مسلم آبادی فیصلہ کن حیثیت میں ہے۔

پارٹی ذرائع کے مطابق تقریباً 40 سیٹوں پرایم آئی ایم اپنا امیدواراتارے گی ، لیکن بعض مسلم دانشور کا ماننا ہے کہ عام مسلمانوں میں ابھی بھی بی جی پی مخالف رحجان پایا جاتا ہے اور وہ بی جے پی کو شکست دینے کے قابل امیدوارکو ہی ترجیح دیتے ہیں۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز