یوپی میں الیکشن سے قبل بی جے پی میں بغاوت کی لہر تیز، باغی لیڈر جوائن کر رہے پیس پارٹی

Jan 25, 2017 01:15 PM IST | Updated on: Jan 25, 2017 01:15 PM IST

نئی دہلی۔ بھارتیہ جنتا پارٹی میں نئے شامل ہوئے دوسری جماعتوں کے رہنماؤں کو ٹکٹ دینے کی مخالفت تھمنے کا نام نہیں لے رہی ہے۔ یوپی کے کئی اضلاع میں مسلسل احتجاج ہو رہے ہیں۔ کئی لیڈر بغاوتی رخ اختیار کرتے ہوئے آزاد امیدوار کے طور پر ہی میدان میں کودنے کی تیاری میں مصروف ہو گئے ہیں۔ ادھر پارٹی میں باغی رہنماؤں کو منانے کی کوششیں بھی تیز ہو گئی ہیں۔ غیر مطمئن لیڈروں کو الگ الگ سطح پر منانے، سمجھانے کا کام شروع ہو گیا ہے۔ کسی سے ریاستی عہدیدار رابطہ کر رہے ہیں، کسی کو منانے کے لئے امیدوار کو ہی بھیجا جا رہا ہے۔ پارٹی کو ڈر ہے کہ اگر پرانے اور معروف لیڈر پارٹی امیدواروں کے خلاف انتخابی میدان میں اترے تو صورت حال خطرناک ہو سکتی ہے۔

سب سے زیادہ اودھ کے علاقے اس کی زد میں ہیں۔ لکھنؤ میں تقریبا تمام سیٹوں پر عدم اطمینان دیکھنے کو مل رہا ہے۔ یہاں موہن لال گنج سے بی جے پی امیدوار بنائے گئے آر کے چودھری کے خلاف پارٹی کے کارکن متحرک ہوتے دکھائی دے رہے ہیں۔ آر کے چودھری کو ٹکٹ نہیں دیے جانے کی مخالفت کرتے ہوئے کئی بی جے پی کارکنوں نے ریاستی دفتر میں نعرے بازی کی۔ بی جے پی یوا مورچہ کے سابق ریاستی جنرل سکریٹری ابھیجات مشرا کے بھی ہائی پروفائل ہو چکی کینٹ سیٹ سے بی جے پی امیدوار ریتا بہوگنا جوشی کے خلاف اترنے کی خبریں آ رہی ہیں۔ تاہم ابھیجات کہتے ہیں کہ انہوں نے ابھی تک کوئی فیصلہ نہیں لیا ہے۔ لیکن وہ اشاروں میں امیدوار کے انتخاب کے عمل پر سوال ضرور اٹھاتے ہیں۔ لکھنؤ کینٹ سے سابق بی جے پی ممبر اسمبلی و ٹکٹ نہ ملنے سے ناراض سریش تیواری کے بھی نامزدگی کے لئے فارم منگانے کی چرچا زوروں پر ہے۔ پتہ چلا ہے کہ سریش چندر تیواری سروجنی نگر سے امیدوار کے نام کے اعلان کا انتظار کر رہے ہیں۔

یوپی میں الیکشن سے قبل بی جے پی میں بغاوت کی لہر تیز، باغی لیڈر جوائن کر رہے پیس پارٹی

فائل فوٹو

ان کے علاوہ لکھنؤ مغرب سے بی جے پی کے ٹکٹ کی دعویداری کر رہے منوج کمار گپتا اور لکھنؤ وسط سے منیش کمار گپتا کے بھی بغاوتی تیور اختیار کرتے ہوئے میدان میں اترنے کی بحث چل رہی ہے۔ تاہم ان لیڈروں نے ابھی تک کوئی اعلان نہیں کیا ہے۔ دیگر اضلاع میں بی جے پی اور سماج وادی پارٹی کے امیدواروں کی فہرست جاری ہونے کے بعد بغاوت کے تیور اور تیکھے ہوتے دکھائی دے رہے ہیں۔بارہ بنکی میں بی جے پی اور سماج وادی پارٹی کے ایک ایک سابق رکن اسمبلی نے پیس پارٹی جوائن کر الیکشن میں اترنے کا اعلان کر دیا ہے۔ ان کے علاوہ ایس پی کے ایک اور سابق رکن اسمبلی آر ایل ڈی سے الیکشن لڑنے کی تیاری میں ہیں۔

بی جے پی سے رام نگر کے لئے ٹکٹ مانگ رہیں سابق ممبر اسمبلی راج لكشمی ورما ٹکٹ نہ ملنے سے باغی ہو گئی ہیں۔ انہوں نے پیس پارٹی جوائن کر میدان میں اترنے کا اعلان کر دیا ہے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز