ایس پی۔ کانگریس کی دوستی میں آئی 'دراڑ'، امیٹھی-رائے بریلی کی ان سیٹوں پر نہیں بن رہی بات

Jan 25, 2017 11:22 AM IST | Updated on: Jan 25, 2017 11:23 AM IST

نئی دہلی۔ اتر پردیش اسمبلی انتخابات کو لے کر حالانکہ کانگریس اور سماج وادی پارٹی میں اتحاد ہو گیا ہے، لیکن اب بھی سیٹوں کو لے کر دونوں جماعتوں میں پینچ پھنسا ہوا ہے۔ دراصل، یوپی انتخابات میں سماج وادی پارٹی 298 اور کانگریس 105 اسمبلی سیٹوں پر الیکشن لڑے گی۔ تاہم، اب تک یہ واضح نہیں ہو پایا کہ کن نشستوں پر کون سی پارٹی الیکشن لڑے گی۔ کانگریس نے منگل کو کہا کہ وہ امیٹھی اور رائے بریلی کی تمام 10 اسمبلی سیٹوں پر الیکشن لڑے گی۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ سماج وادی پارٹی ان 10 میں سے پانچ سیٹوں پر پہلے ہی امیدواروں کا اعلان کر چکی ہے۔

پرینکا گاندھی پر ٹکی نگاہیں

ایس پی۔ کانگریس کی دوستی میں آئی 'دراڑ'، امیٹھی-رائے بریلی کی ان سیٹوں پر نہیں بن رہی بات

امیٹھی سے کانگریس کے ایم ایل سی اور گاندھی خاندان کے بے حد قریبی دیپک سنگھ نے کہا، 'گزشتہ پانچ سال سے ان سیٹوں پر جیت کے لئے ہم پوری محنت کر رہے ہیں۔ خاص طور پر 2014 لوک سبھا انتخابات کے بعد تو ہم نے ان سیٹوں پر اپنی پوری طاقت جھونک دی۔ سماج وادی پارٹی کے مقابلے ان سیٹوں پر جیتنے کا ہمارا زیادہ امکان ہے۔ ہم لوگوں نے اپنے کارکنوں سے بھی کہہ دیا ہے کہ ان سیٹوں پر کانگریس ہی الیکشن لڑے گی۔

انڈین ایکسپریس میں شائع خبر کے مطابق، کانگریس لیڈروں نے اپنی بات اب پرینکا گاندھی تک بھی پہنچا دی ہے۔ پرینکا کا سماجوادی پارٹی اور کانگریس کے درمیان اتحاد کرانے میں اہم کردار رہا ہے۔ ایسے میں کانگریسی کارکنوں کو امید ہے کہ ان کی بات ضرور سنی جائے گی۔ امیٹھی میں کانگریسی ترجمان انل سنگھ نے کہا، 'کارکنوں کے جذبات یہاں پنجہ کے نشان کے ساتھ ہیں۔ ہم نے پارٹی اعلیٰ کمان اور کارکنوں کو بھی بتا دیا ہے کہ ہم یہاں تمام سیٹوں (امیٹھی اور رائے بریلی) پر الیکشن لڑیں گے۔

دراصل، کئی کانگریسی کارکنوں اور لیڈروں کا خیال ہے کہ اگر انہوں نے امیٹھی اور رائے بریلی کی پانچ سیٹیں ایس پی کے لئے چھوڑ دیں تو 2019 کے لوک سبھا انتخابات میں انہیں نقصان ہوگا۔ اس کے بعد شاید ہی وہ ان سیٹوں پر پھر سے کھڑا ہو پائیں۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز