اترپردیش اسمبلی انتخابات: دوسرے مرحلہ کے لئے پولنگ ختم، 721 امیدواروں کی قسمت کا فیصلہ ای وی ایم میں بند

Feb 15, 2017 08:40 AM IST | Updated on: Feb 15, 2017 05:37 PM IST

لکھنو : دوسرے مرحلہ میں 11 اضلاع کی 67 سیٹوں کے لئے ووٹنگ شام 5 بجے ختم ہو گئی۔ اسی کے ساتھ 721 امیدواروں کی قسمت کا فیصلہ بھی ای وی ایم میں بند ہو گیا۔ اب شام 6 بجے تک انہی لوگوں کو ووٹ ڈالنے دیا جائے گا ، جو پولنگ بوتھ کے اندر ہیں۔

قبل ازیں سنبھل ضلع کے گننور اسمبلی علاقے کے گاؤں افضل پور میں بوتھ نمبر -197 سے پولیس نے فرضی ووٹ ڈالنے کے الزام میں دو خواتین کو حراست میں لیا ہے۔ ادھرریاست کے ایڈیشنل پولیس ڈائریکٹر جنرل (قانون) دلجیت چودھری نے ریاست میں پرامن پولنگ ہونے کا دعوی کرتے ہوئے کہا کہ کہیں سے کسی ناخوشگوار واقعہ کی اطلاع نہیں ہے۔ سلامتی دستوں کے جوان مکمل طور پر مستعد ہیں۔

اترپردیش اسمبلی انتخابات: دوسرے مرحلہ کے لئے پولنگ ختم، 721 امیدواروں کی قسمت کا فیصلہ ای وی ایم میں بند

آزادانہ اور منصفانہ طریقے سے الیکشن مکمل کرانے کے لئے پولنگ اہلکار اور مرکزی نیم فورس پولنگ مراکز پر تعینات ہیں جبکہ حساس مقامات پررائے دہندگان کا اعتماد بحال کرنے کے لئے سلامتی دستے فلیگ مارچ کررہے ہیں۔ ووٹنگ کے دوران ہیلی کاپٹر اور ڈرون کیمرے کے ذریعے امن و قانون کی صورت حال پر نظر رکھی جا رہی ہے۔ تقریبا تمام مراکز پر ویڈیو ریکارڈنگ اور کئی مراکز پر پولنگ کی لائیو کوریج ہورہی ہے۔

ان میں سہارنپور، بجنور، مرادآباد، سنبھل، رام پور، بریلی، امروہہ، پیلی بھیت، لکھیم پور کھیری، شاہ جہاں پور اور بدایوں اضلاع کے بیہٹ، نکوڑ، سہارنپور نگر، سہارنپور، دیوبند، رام پور منی ہارن (محفوظ) گنگوہ، نجیب آباد، نگینہ (محفوظ)، بڈاپور، دھامپور، نہٹور (محفوظ)، بجنور، چاند پور، نورپور، کانٹھ، ٹھاکردوارا، مرادآباد دیہی، مرادآباد شہر، کدرکی، بلاری، چندوسی (محفوظ)، اسمولی، سنبھل، گنور، سوار، چمرووا، بلاس پور، رام پور، ملک( محفوظ)، بہیڈی، میرگنج، بھوجی پورا، نواب گنج، فرید پور (محفوظ)، بتھری چین پور، بریلی، بریلی کینٹ، آنولہ، دھنورا (محفوظ)، نوگاو سادات، امروہہ، حسن پور، پیلی بھیت، برکھیڈا، پورنپور (محفوظ)، بلاسپور، پلیا، نگھاسن، گولہ گوکرن ناتھ، شری نگر (محفوظ)، دھورہرا، لکھیم پور، کستا (محفوظ)، محمدی، کٹرا، جلال آباد، تلہر، پوایا (محفوظ)، شاہ جہاں پور، ددرول، بسولی(محفوظ)، سہسوان، بلسی، بدایوں، شیخ پور اور دانتاگنج اسمبلی سیٹوں پر  صبح سات بجے سے پولنگ ہورہی ہے۔

voting

اس مرحلے میں مغربی اتر پردیش کے 11 اضلاع کی بیشتر نشستوں پر مسلم ووٹ ہار جیت میں اہم کردارادا کریں گے۔ تقریبا 70 فیصد نشستوں پر 30 فیصد سے زیادہ مسلم رائے دہندگان ہیں۔ صرف رام پور ضلع میں 70 فیصد مسلم آبادی ہے۔ سیاسی جماعتوں نے 15 سیٹوں پر 64 مسلمان امیدواروں کو ٹکٹ دیا ہے جن میں ایس پی ۔کانگریس، بی ایس پی، راشٹریہ لوک دل اور دیگر پارٹیاں شامل ہیں۔

voting2

سال 2012 کے اسمبلی انتخابات میں 67 نشستوں میں سے سماجوادی پارٹی نے 34، بی ایس پی نے 18، بی جے پی نے دس، کانگریس نے تین اور دیگر نے دو پر جیت حاصل کی تھی۔ اتراکھنڈ سے ملحق اضلاع اور روہیل کھنڈ علاقوں میں اسی مرحلے میں پولنگ ہورہی ہے۔ ان علاقوں کے آس پاس کے علاقوں میں پہلے مرحلے میں ہوئے انتخابات میں جم کر پولنگ ہوئی تھی جبکہ اتراکھنڈ میں انتخابات کے دوسرے مرحلے کے ساتھ آج پولنگ ہورہی ہے۔

انتخابات میں امن و قانون اور ترقی سیاسی جماعتوں کا اہم ایجنڈا رہا ہے۔ بی جے پی نے الیکشن میں فرقہ وارانہ فسادات، مظفرنگر فسادات، سلاٹر ہاؤس جیسے مسائل کو اٹھایا ہے۔ دوسری جماعتوں نے بھی مرکزی حکومت اور بی جے پی کے خلاف سیکولرازم کا معاملہ اٹھاکر اسے گھیرنے کی کوشش کی ہے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز