الزامات پر وسیم رضوی نے توڑی خاموشی ، میں خود بھی چاہتا ہوں کہ وقف بورڈ کی ہو سی بی آئی جانچ

Jun 17, 2017 01:16 PM IST | Updated on: Jun 17, 2017 01:16 PM IST

لکھنو : یوپی کے وقف بورڈ میں کروڑوں روپے کے گھوٹالے اور بدعنوانی کے الزامات کے بعد چیئرمین وسیم رضوی کھل کر سامنے آ گئے ہیں۔ الزامات کا جواب دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ میں خود چاہتا ہوں کہ سی بی آئی جانچ ہو۔ انہوں نے کہا کہ میں نے کئی مرتبہ وزیر اعلی یوگی سے ملاقات کر کے وقف بورڈ کی جانچ کروانے کا مطالبہ کیا۔ وسیم رضوی نے دعوے کے ساتھ بات کرتے ہوئے کہا کہ میں نے کوئی غیر قانونی قبضہ یا گھوٹالہ نہیں کیا، حکومت جس بھی سطح سے جانچ کروانا چاہے وہ کروا سکتی ہے۔

شیعہ وقف بورڈ کے چیئرمینرضوی نے کہا کہ میں نے کوئی گھوٹالہ نہیں کیا، اگر یہ لوگ سچے مسلمان ہیں ، تو پورے وقف بورڈ کی جانچ کرائیں، میں تیار ہوں۔ کس نے گھوٹالہ کیا ہے، کس کے بھائی نے زمین پر قبضہ کیا اور کون سا شخص مذہب گرو بن کر لوگوں کو گمراہ کر رہا ہے، سبھی باتیں صاف ہوجائیں گی ۔

الزامات پر وسیم رضوی نے توڑی خاموشی ، میں خود بھی چاہتا ہوں کہ وقف بورڈ کی ہو سی بی آئی جانچ

شیعہ وقف بورڈ کے چیئرمین وسیم رضوی نے کہا کہ میں خود بھی چاہتا ہوں کہ وقف بورڈ کی تحقیقات ہو، کیونکہ جب جانچ ہوگی ، تو سب سے پہلے یوپی حکومت کے وزیر محسن رضا ہی پھنسیں گے ، کیونکہ چوک میں واقع پرانی موتی مسجد کی زمین پر غیر قانونی قبضہ کرکے محسن رضا نے اپنا گھر بنوایا۔

انہوں نے سماج وادی پارٹی کے ایم ایل سی بکل نواب اور ایک ٹھیکیدار رستوگي کے ساتھ مل کر پراپرٹی ڈیلر کے ساتھ مل کر اسی مسجد کی زمین کو فروخت کیا تھا، جب ہم نے ان کو نوٹس بھیجا تو اب مجھے بدنام کرنے کے لئے گھسیٹا جا رہا ہے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز