آئین میں تبدیلی پر تبصرہ: اپوزیشن کا ہیگڑے سے استعفی کا مطالبہ، راجیہ سبھا میں ہنگامہ

راجیہ سبھا میں آج کانگریس سمیت مکمل اپوزیشن نے ہنرمندی کے فروغ کے وزیر مملکت اننت کمار ہیگڑے کے آئین میں تبدیلی کرنے کے تبصرہ پر احتجاج کرتے ہوئے ان کے استعفی کا مطالبہ کیا جس کی وجہ سے ایوان کی کارروائی دوپہر 12 بجے پھر اس کے بعد دو بجے تک کے لئے ملتوی کر دی گئی۔

Dec 27, 2017 02:52 PM IST | Updated on: Dec 27, 2017 02:52 PM IST

نئی دہلی۔ راجیہ سبھا میں آج کانگریس سمیت مکمل اپوزیشن نے ہنرمندی کے فروغ کے  وزیر مملکت اننت کمار ہیگڑے کے آئین میں تبدیلی کرنے کے تبصرہ پر احتجاج کرتے ہوئے ان کے استعفی کا مطالبہ کیا جس کی وجہ سے ایوان کی کارروائی دوپہر 12 بجے پھر اس کے بعد دو بجے تک کے لئے ملتوی کر دی گئی۔

چیئرمین ایم ونکیا نائیڈو نے صبح جیسے ہی ایوان کی کارروائی شروع کی تو کانگریس، سماجوادی پارٹی، بہوجن سماج پارٹی اور ترنمول کانگریس کے رکن اپنی اپنی جگہ پر کھڑے ہو گئے۔ اس پر مسٹر نائیڈو نے کہا کہ پہلے ضروری قانون سازی کے کام نمٹا لینے کے بعد سب کی بات سنی جائے گی۔

آئین میں تبدیلی پر تبصرہ: اپوزیشن کا ہیگڑے سے استعفی کا مطالبہ، راجیہ سبھا میں ہنگامہ

راجیہ سبھا، ٹی وی سے لی گئی تصویر

اس کے بعد چیئرمین نے ضروری قانون سازی کاغذات ایوان  میں ركھوائے اور حزب اختلاف کے رہنما غلام نبی آزاد سے اپنی بات رکھنے کو کہا۔ اس سے پہلے مسٹر ہیگڑے کی وزارت سے متعلق کاغذات ایوان کی میز پر رکھے جا رہے تھے تو کانگریس سمیت دیگر اپوزیشن جماعتوں کے ارکان نے 'شرم کرو، شرم کرو' کے نعرے لگائے۔ مسٹر آزاد نے کہا کہ مسٹر ہیگڑے حکومت میں وزیر ہیں اور انہیں آئین میں اعتماد نہیں ہے۔ لہذا، انہیں وزیر عہدہ پر بنے رہنے کا کوئی حق نہیں ہے۔ انہیں فوری طور پر استعفی دے دینا چاہئے۔ کانگریس لیڈر نے کہا کہ انہوں نے آئین میں تبدیلی کی بات کی ہے۔ یہ کوئی چھوٹی بات نہیں ہے، بلکہ بہت سنگین مسئلہ ہے۔ اس پر فوری طور پر بحث ہونی چاہیے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز