دیدی اور پی ایم مودی کے درمیان تلخی کا اثر ، بنگال کے وزیر خزانہ نے درمیان میں ہی چھوڑی بجٹ میٹنگ

Jan 04, 2017 10:43 PM IST | Updated on: Jan 04, 2017 10:43 PM IST

نئی دہلی : سال 2017-18 کے عام بجٹ کو لے کر وزیر خزانہ ارون جیٹلی کی طرف سے آج بلائی گئی بجٹ سے سے قبل کی میٹنگ کو مغربی بنگال کے وزیر خزانہ امت مترا درمیان میں ہی چھوڑ کر چلے گئے۔ مسٹر جیٹلی نے یہاں ریاستوں کے وزرائے خزانہ کے ساتھ بجٹ کی تیاریوں سے پہلے یہ میٹنگ منعقد کی تھی۔ مسٹر مترا اس میٹنگ سے دوران ہی باہر آ گئے اور انہوں نے نامہ نگاروں سے کہا کہ نوٹ بندي کی وجہ سے ملک کی معیشت کو بھاری نقصان ہوا ہے۔ اس وجہ سے بجٹ کا کوئی مطلب ہی نہیں رہ گیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ میں دکھی دل سے کہہ رہا ہوں کہ میٹنگ میں ریاست کاتعارف دینے کے بعد باہر میں آ گیا، ملک کی ترقی کی قربانی دی جا رہی ہے۔ مسٹر مترا نے کہا نوٹ بندي کی وجہ مزدوروں کی روزی روٹی پر برا اثر پڑا ہے اور ان کا برا حال ہے۔ گجرات میں مزدور کام نہ ملنے کی وجہ سے واپس اپنے گھروں کو لوٹ رہے ہیں۔ چمڑے کی صنعت بری طرح متاثر ہے لیکن مرکزی حکومت پر کوئی اثر نہیں پڑا ہے۔

دیدی اور پی ایم مودی کے درمیان تلخی کا اثر ، بنگال کے وزیر خزانہ نے درمیان میں ہی چھوڑی بجٹ میٹنگ

واضح رہے کہ مغربی بنگال کی وزیر اعلی اور ترنمول کانگریس کے سربراہ ممتا بنرجی لوک سبھا میں پارٹی کے لیڈر سدیپ بندھوپادھيائے اور ایم پی تاپس پال کو روز ویلی چٹ فنڈ کیس میں مرکزی تفتیشی بیورو (سی بی آئی) کی طرف سے گرفتار کئے جانے کی وجہ سے مرکزی حکومت سے ناراض ہیں۔ محترمہ بنرجی کا الزام ہے کہ نوٹ بندي کی مخالفت کرنے پر مرکز کے اشارے پر یہ گرفتاریاں کی گئی ہیں۔ مسٹر بندھوپادھيائےکو سی بی آئی نے کل اور مسٹر پال کو 30 دسمبر کو گرفتار کیا تھا۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز