بیٹی کی علاج کی خاطر فروخت ہونے کے لئے تیار ہے یہ پورا کنبہ ، مگر نہیں مل رہا کوئی خریدار

Jun 09, 2017 11:25 PM IST | Updated on: Jun 09, 2017 11:43 PM IST

آگرہ : پورا کنبہ فروخت کیلئے دستیاب ہے، مگر صرف میری بیٹی کا علاج کرا دو ۔ ایسی بات کوئی بے بس باپ ہی کہہ سکتا ہے۔ پائی پائی سے محروم اسکول ٹیکسی چلا کر زندگی گزرانے والا آگرہ کا رہنے والا سنتوش آج اپنے کنبہ کے ساتھ ایم پی رام شنکر کٹھیریا کی رہائش گاہ پرپہنچا اور اپنی بیٹی کے علاج کے لئے پورے خاندان کو فروخت کرنے کی اجازت طلب کی ۔

وقت کا پہیا ایسا گھوما ہے کہ آج اپنی اولاد کی خاطر یہ دونوں میاں بیوی در در کی ٹھوکریں کھا رہے ہیں ۔ اسکول وین چلا کر سنتوش جیسے تیسے اپنے کنبہ کا گزر بسر کر رہا ہے ۔ اب اتنے کم پیسوں میں وہ اپنی پانچ سال کی معصوم بچی کا علاج کس طرح کرائے جو تھیلیسيميا جیسی بیماری میں مبتلا ہے ۔ بچی کا ہر 15 دنوں میں خون تبدیل کیا جاتا ہے ، جس میں سنتوش کی پوری تنخواہ خرچ ہو جاتی ہے ۔

بیٹی کی علاج کی خاطر فروخت ہونے کے لئے تیار ہے یہ پورا کنبہ ، مگر نہیں مل رہا کوئی خریدار

سنتوش کا کنبہ اب پوری طرح  ٹوٹ چکا ہے ۔ اس کی بیٹی کے ساتھ ساتھ اس کے بیٹے کو بھی لكوے کی بیماری ہے ، جس کا تو علاج جیسے تیسے یہ لوگ کر رہے ہیں ، مگر بیٹی کا علاج اب مشکل ہوتا جا رہا ہے ، جس کی وجہ سے یہ خاندان ایم پی کٹھیریا سے فروخت ہونے کی اجازت مانگ رہا ہے اور اس کے بدلے میں وہ صرف بیٹی کا علاج چاہتا ہے ۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز