یشونت سنہا کا جیٹلی پر جوابی حملہ : جس نے لوک سبھا کی شکل نہیں دیکھی وہ مجھ پرعہدہ مانگنے کا لگارہا ہے الزام

Sep 29, 2017 05:21 PM IST | Updated on: Sep 29, 2017 05:21 PM IST

نئی دہلی : مودی حکومت کی اقتصادی پالیسیوں پر جاری بحث کے درمیان بھارتیہ جنتا پارٹی کے سینئر لیڈر اور سابق مرکزی وزیر خزانہ یشونت سنہا نے آج پھر سخت حملہ کرتے ہوئے کہا کہ وزیر خزانہ ارون جیٹلی کبھی انتخابات جیت کر حکومت میں نہیں آئے لہذا، وہ عام لوگوں کے توقعات اور ان کی مشکلات کی پرواہ نہیں کرتے۔ مسٹر سنہا نے مسٹر جیٹلی کے بیان پر سخت رد عمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ، "میں نے آئی اے ایس کی نوکری چھوڑنے کے 15 دنوں کے اندر اپنے لئے ایک پارلیمانی حلقہ کا انتخاب کر لیا تھا۔ وہ 30 سال بعدبھی لوک سبھا کی نشست کی تلاش میں ہیں۔ مسٹر جیٹلی کبھی لوک سبھا میں نہیں رہے، اس لیے انہیں پتہ نہیں ہے کہ لوگوں کی توقعات کیا ہیں اور ان کے مسائل کیا ہیں۔

مسٹر جیٹلی نوجوانوں کے درمیان جائیں اور ان سے پوچھیں کہ کیا انہیں نوکری مل رہی ہے۔ مسٹر جیٹلی کے پاس کتنے نوجوان نوکری مانگنے آتے ہیں وہ کبھی لوک سبھا میں رہے ہی نہیں تو انہیں اس بارے میں پتہ نہیں چلے گا۔ " انہوں نے کہا کہ لوک سبھا کا رکن ہی سمجھ سکتا ہے کہ کسی پارلیمانی حلقہ میں 15 سے 16 لاکھ لوگوں کی فکر کس طرح کی جا تی ہے۔

یشونت سنہا کا جیٹلی پر جوابی حملہ : جس نے لوک سبھا کی شکل نہیں دیکھی وہ مجھ پرعہدہ مانگنے کا لگارہا ہے الزام

مسٹر جیٹلی نے مسٹر سنہا کے ایک مضمون پر کل کہا تھا کہ مسٹر سنہا 80 سال کی عمر میں نوکری کی تلاش میں ہیں۔ اس پر، مسٹر سنہا نے کہا کہ میں مسائل کے بارے میں بات کر رہا ہوں، لیکن وہ ذاتی حملے کر رہے ہیں۔ جنہوں نے لوک سبھا کی شکل نہیں دیکھی وہ مجھ پرعہدہ مانگنے کا الزام لگا رہے ہیں۔

مسٹر سنہا نے مسٹر جیٹلی پر سخت حملہ کرتے ہوئے کہا کہ آئی اے ایس کی نوکری اوروزیر مملکت کا عہدہ چھوڑنے والے شخص پر وہ نوکری مانگنے کا الزام لگا رہے ہیں۔مسٹر جیٹلی نے مسٹر اٹل بہاری واجپئی کی حکومت میں بغیر انتخابات لڑے ہی وزیر مملکت کا عہدہ لیا تھا۔ انہوں نے کہا، "مسٹر جیٹلی میرا پس منظر بھول گئے ہیں ۔ وہ بھول گئے ہیں کہ میری 12 سال کی نوکری باقی تھی اور میں سب کچھ چھوڑ کر سیاست میں آیا۔آج کوئی کہے کہ میں 80 سال کی عمر میں عہدے کی تلاش کر رہا ہوں، تو یہ صحیح کیسے ہوسکتا ہے؟

سینئر بی جے پی لیڈرنے کہا کہ 1989 میں وی پی سنگھ ملک کے وزیر اعظم تھے، انہوں نے مجھے حلف لینے کے لئے راشٹرپتی بھون میں مدعو کیا تھا۔ میں حلف لئے بغیر واپس آگیا کیونکہ میں نے سوچا کہ وہ میرے ساتھ انصاف نہیں کر ر ہے ہیں۔ میں نے وزیر کے عہدے کی قربانی دی اور آئی اے ایس کا عہدہ چھوڑ دیا۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز