وزیر اعلی یوگی نے کیا تاج محل کو دیدار ، کہا : مزدوروں کے خون پسینے سے بنی عمارت پر کوئی تنازعہ نہیں

ٓآگرہ۔ گزشتہ دنوں تاج محل کو لے کر شروع ہوئے تنازعہ کے بیچ وزیر اعلیٰ یوگی آدتیہ ناتھ جمعرات کو آگرہ پہنچے۔

Oct 26, 2017 09:50 AM IST | Updated on: Oct 26, 2017 09:27 PM IST

آگرہ : اترپردیش کے وزیر اعلی يوگي آدتیہ ناتھ نے تاج محل کو قومی ورثہ قرار دیتے ہوئے کہا، ’’یہ یادگار ہندوستانی مزدوروں کے خون پسینے سے بنا ہے، اس پر کوئی تنازعہ نہیں ہونا چاہیے‘‘۔ مسٹر یوگی نے آج یہاں پریس کانفرنس میں کہا کہ تاج محل قومی ورثہ ہے، اس پر کسی قسم کا اختلاف نہیں ہونا چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ آگرہ ملک کا اہم سیاحتی مقام ہے۔ تاج محل ہندوستانی پیسہ سے بنا ہے۔ اس یادگار کو بنانے کے لئے ہندوستانی مزدوروں نے اپنا خون پسینہ بہایا ہے۔ یہ ریاست کاورثہ ہے۔ اس کا تحفظ اور بہتری کا کام حکومت کا ہے۔

غور طلب ہے کہ بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) ممبر اسمبلی سنگیت سوم نے گزشتہ دنوں ایک بیان میں تاج محل کو ہندوستانی ثقافت پر ’دھبہ‘ بتا کر تنازعہ کھڑا کر دیا تھا۔ وہیں کچھ دوسرے سیاستدانوں نے کہا تھا کہ یونیسکو کا یہ عالمی ثقافتی ورثہ کے دیدار کے لیے لاکھوں مقامی و بیرون ملک سیاحوں پہنچتے ہیں اور اس پر تنازعہ نہیں ہونا چاہیے۔

وزیر اعلی یوگی نے کیا تاج محل کو دیدار ، کہا : مزدوروں کے خون پسینے سے بنی عمارت پر کوئی تنازعہ نہیں

مسٹر یوگی تاج محل کے پاس تقریباً 30 منٹ ٹھہرے۔ انہوں نے اس کی کشش نقاشیوں انتہائی توجہ سے دیکھا۔ وہاں موجود حکام سے اس کے بارے میں کچھ پوچھا۔ انہوں نے تاج محل کو دیکھنے کے بعد کوئی فوری ردعمل کا توا اظہارتو نہیں کیا، لیکن وہاں تعینات ایک پولیس افسر نے بتایا کہ وزیر اعلی کو تاج محل کافی پسند آیا۔ شاید یہ پہلا موقع ہے جب مسٹر یوگی تاج محل دیکھنے گئے۔

مسٹر یوگی کے تاج محل میں جانے کے وقت میڈیا کو اندر جانے کی اجازت نہیں دی گئی۔ میڈیا کے نمائندوںکو مغربی گیٹ پر ہی روک دیا گیا۔ تاج محل کے احاطے میں جانے کے لیے مغربی، مشرقی اور جنوبی دروازے ہیں۔ مسٹر یوگی مغربی دروازے سے اندر گئے اور اسی دروازہ سے تقریباً آدھے گھنٹے بعد باہر نکلے۔

Loading...

Loading...

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز