یو پی میں شیعہ اور سنی اوقاف عدم تحفظ کے شکار، یوگی حکومت کے پاس ناجائز قبضہ سے بچانے کی نہیں ہے کوئی واضح پالیسی

Jun 08, 2017 10:45 PM IST | Updated on: Jun 08, 2017 10:46 PM IST

الہ آباد : یو پی میں اوقاف کا تحفظ ایک بڑا مسئلہ بنتا جا رہا ہے ۔ شہروں میں واقع اوقاف کی جائیداد پربڑے پیمانے میں قبضہ ہو چکا ہے ۔ ریاست کی سابقہ سماج وادی پارٹی حکومت میں اوقاف پرسےغیرقانونی قبضہ ختم کرانے کی مہم شروع کی گئی تھی، لیکن ریاست کی موجودہ بی جے پی حکومت نے ابھی تک اوقاف کے تحفظ کے سلسلہ میں اپنی کوئی پالیسی وضع نہیں کی ہے ۔

یو پی میں شیعہ اور سنی اوقاف کے تحفظ کے لیے دو بورڈ موجود ہیں ۔ سنی وقف بورڈ اور شیعہ وقف بورڈ ، لیکن ان بورڈوں کے باوجود شیعہ اور سنی اوقاف پرغیر قانونی قبضے کا سلسلہ رکنے کا نام نہیں لے رہا ہے۔ گرچہ دونوں وقف بورڈ کو قانونی اختیارات حاصل ہیں ۔تاہم وقف بورڈ نے ابھی تک غیر قانونی قبضہ کرنے والوں کے خلاف کوئی موثرکاروائی نہیں کی ہے۔

یو پی میں شیعہ اور سنی اوقاف عدم تحفظ کے  شکار، یوگی حکومت کے پاس ناجائز قبضہ سے بچانے کی نہیں ہے کوئی واضح پالیسی

ریاست میں اوقاف کی تباہی کے لئے وقف بورڈ کی طرف سے مقررکردہ متولی ہی بڑی حد تک ذمہ دار ہیں ۔شہروں میں واقع قیمتی اوقاف پر غیر قانونی قبضے میں متولیان کے شامل ہونے کے واقعات سامنے آ رہے ہیں۔ اوقاف پر غیر قانونی قبضے میں متولیان کے شامل ہونے سے مسئلہ مزید سنگین ہو گیا ہے۔ ریاست کی سابقہ سماج وادی حکومت نے اوقاف کی جائیداد پر سے غیر قانونی قبضہ ختم کرانے کی مہم شروع کی تھی ، لیکن ریاست کا سیاسی نظام بدل جانے کے بعد ابھی تک اوقاف کے تعلق سے حکومت کی کوئی پالیسی سامنے نہیں آئی ہے ۔ ریاستی حکومت نے اگر جلد ہی غیر قانونی قبضوں پر روک نہ لگائی تو صورت حال بد سے بدتر ہو جانے کا اندیشہ ہے ۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز