توہین عدالت کیس میں عمران خان کو ایک اور وجہ بتاو نوٹس

Aug 23, 2017 05:00 PM IST | Updated on: Aug 23, 2017 05:00 PM IST

اسلام آباد۔ اسلام آباد ہائی کورٹ نے پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کی اس در خواست کو قبول نہیں کیا جس میں الیکشن کمیشن آف پاکستان (ای سی پی) کے اختیار کو چیلنج کیا گیا تھا۔ دوسری طرف کمیشن نے توہین عدالت کیس کی سماعت کے دوران آج پاکستان پی ٹی آئی کے چیئرمین عمران خان کو مزید ایک وجہ بتاو نوٹس جاری کردیا۔ کمیشن پی ٹی آئی کے ناراض بانی رہنما اکبر ایس بابر کی جانب سے دائر کی گئی درخواست کی سماعت کر رہا تھا۔یہ اطلاع روزنامہ ڈان کی ایک رپورٹ میں دی گئی ہے۔ عمران خان نے اپنے خلاف الیکشن کمیشن کی جانب سے کارروائی کے اختیارات پر سوال اٹھائے تھے تاہم کمیشن نے اسی ماہ یہ واضح کردیا تھا کہ اسے توہین عدالت کے کیس کی سماعت کرنے کا قانونی اختیار حاصل ہے اور پھر پی ٹی آئی کے چیئرمین کو شو کاز نوٹس جاری کرتے ہوئے ان سے 23 اگست تک جواب طلب کیا تھا۔

اس سے قبل کل پی ٹی آئی چیئرمین کے وکیل بابر اعوان الیکشن کمیشن کے بانچ رکنی بینچ سے درخواست کی تھی کہ وہ توہین عدالت کیس میں الیکشن کمیشن کے فیصلے کو چیلنج کرنا چاہتے ہیں جس کے لیے انہیں وقت دیا جائے۔ ای سی پی کی جانب سے بہر حال یہ فیصلہ کیا گیا کہ عمران خان کو ایک اور شو کاز نوٹس بھیجا جائے اور کیس کی سماعت کو 14 ستمبر تک کے لیے ملتوی کردیا گیا۔ رواں ماہ کے آغاز میں سی ای سی کی جانب سے فیصلہ سنائے جانے کے بعد پی ٹی آئی کے وکیل شاہد گوندل نے میڈیا کو بتایا تھا کہ وہ اس فیصلے کو اسلام آباد ہائی کورٹ میں چیلنج کریں گے کیونکہ ای سی پی کو توہین عدالت کے کیس کی سماعت کرنے کا اختیار نہیں۔

توہین عدالت کیس میں عمران خان کو ایک اور وجہ بتاو نوٹس

عمران خان: فائل فوٹو

عمران خان ایک طویل عرصے سے اپنے وکیل کے ذریعے ای سی پی پر زور دے رہے ہیں کہ توہین عدالت کی پٹیشن پر سماعت کا اختیار صرف سپریم کورٹ کے پاس ہےجہاں فریقین کے پاس  اپیل کرنے کا موقع ہوتا ہے۔ دوسری جانب درخواست گزار کے وکیل سید احمد حسن نے متعدد مرتبہ متعلقہ آئینی شقوں اور قوانین کے ذریعے اس بات کو ثابت کرنے کی کوشش کی کہ ای سی پی توہین عدالت کیس کی سماعت کرسکتا ہے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز