دہشت گرد گروپوں سے متعلق برکس منشور کو پاکستان نے کیا خارج ، افغانستان کو بتایا دہشت گردی کی پناہ گاہ

Sep 06, 2017 09:34 AM IST | Updated on: Sep 06, 2017 09:34 AM IST

اسلام آباد : پاکستان نے برکس ممالک کی جانب سے دہشت گرد گروپوں کے تعلق سے جاری اس منشور کو آج خارج کر دیا، جس میں پاکستان میں سرگرم جیش محمد اور لشکر طیبہ سمیت مختلف دہشت گرد تنظیموں کے تشدد کی مذمت اور دہشت گردی کو علاقائی سلامتی کے لیے تشویش کا سبب بتاتے ہوئے اس سے نمٹنے کے لئے وسیع اقدامات کرنے کی اپیل کی گئی ہے۔

پاکستان کے وزیر دفاع خرم دستگر خان نے جیو ٹیلی ویزن چینل سے بات چیت میں برکس ممالک برازیل، روس، ہندستان، چین اور جنوبی افریقہ کی جانب سے کل جاری منشور کو یہ کہتے ہوئے خارج کر دیا کہ پاکستان کے اندر ایسا کوئی گروپ آزادانہ طور پرسرگرم نہیں ہے۔ انہوں نے کہاکہ دہشت گرد تنظیموں کے باقیات کو ہم نے انہیں ختم کر دیا ہے اور اب یہاں ان کا کوئی محفوظ ٹھکانہ نہیں ہے۔

دہشت گرد گروپوں سے متعلق برکس منشور کو پاکستان نے کیا خارج ، افغانستان کو بتایا دہشت گردی کی پناہ گاہ

علامتی تصویر: رائٹرز

وزارت خارجہ کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا کہ پاکستان خود بھی دہشت گردی سے فکر مند ہے اور وہ پاکستان طالبان، اسلامک موومنٹ آف افغانستان، اینٹی بیجنگ ایسٹ ترکستان اسلامک موومنٹ اور اسلامک اسٹیٹ حامی جنگجوؤں کا شکار ہے۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ ہم افغانستان میں بے قابو علاقوں میں ان گروپوں کی موجودگی سے فکر مند ہیں جو علاقے میں امن اور سلامتی کے لئے خطرہ ہیں۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز