پاکستان : درگاہ علی محمد گجر کے متولی نے ساتھیوں کی مدد سے خواتین سمیت 20 افراد کا کیا قتل ، درگاہ پر سیل

Apr 02, 2017 01:16 PM IST | Updated on: Apr 02, 2017 01:16 PM IST

لاہور : نواحی علاقے 95 شمالی کی درگاہ علی محمد گجر میں دربار کے متولی نے ساتھیوں کی مدد سے 20 افراد کو تشدد کر کے قتل اور 4 کو زخمی کردیا۔قتل ہونے والوں میں سے 16 افراد کا پوسٹ مارٹم کر کے لاشیں ورثا کے حوالے کر دی گئی ہیں جب کہ مرنے والوں میں 4 خواتین بھی شامل ہیں۔ مرنے والوں میں 10 مقامی، 2 اسلام آباد، ایک لیہ، ایک پیر محل کا شہری شامل ہے۔

ایکسپریس نیوز کے مطابق واقعہ کے بعد پولیس کی بھاری نفری نے درگاہ کو مکمل طور پر سیل کر دیا ہے جب کہ ذرائع کا کہنا ہے کہ درگاہ کے متولی عبدالوحید کا ذہنی توازن درست معلوم نہیں ہوتا، عبدالوحید مریدین کو برہنہ کر کے دھمال ڈلواتا اور ان سے کہتا کہ اس طرح مریدین گناہوں سے پاک ہو جاتے ہیں۔ ڈپٹی کمشنر سرگودھا لیاقت علی چٹھہ نے واقعہ کی تصدیق کرتے ہوئے بتایا ہے کہ درگاہ کے متولی نے مقتولین کو پہلے نشہ آور چیز کھلا کر بے ہوش کیا اور پھر انہیں چھریوں اور ڈنڈوں کے وار سے قتل کر دیا۔ ڈپٹی کمشنر کے مطابق جاں بحق افراد میں 4 خواتین اور 16 مرد شامل ہیں جبکہ دو خواتین سمیت 4 افراد زخمی ہیں۔ واقعہ کی اطلاع متولی کے تشدد سے بچ کر اسپتال پہنچنے والی خاتون نے دی۔

پاکستان : درگاہ علی محمد گجر کے متولی نے ساتھیوں کی مدد سے خواتین سمیت 20 افراد کا کیا قتل ، درگاہ پر سیل

photo : express news

لیاقت علی چٹھہ کا کہنا ہے کہ دربار کے متولی عبدالوحید اور درگاہ کی صفائی کرنے والے نوید سمیت 3 افراد کو گرفتار کر لیا گیا ہے۔ ڈپٹی کمشنر کے مطابق گرفتار عبدالوحید خود کو اعلیٰ پائے کی روحانی شخصیت کہتا تھا اور الیکشن کمیشن کا ملازم ہے۔ دوسری جانب ترجمان الیکشن کمیشن کا اس حوالے سے کہنا ہے کہ عبدالوحید کا ادارے سے کوئی تعلق نہیں، وہ الیکشن کمیشن کا سابق ملازم اور لاہور میں تعینات تھا تاہم عبدالوحید نے ایک سال قبل الیکشن کمیشن سے ریٹائرمنٹ لے لی تھی۔وزیراعلیٰ پنجاب شہباز شریف نے سرگودھا میں ہونے والے افسوسناک واقعہ کی رپورٹ طلب کر لی ہے جب کہ آر پی او کی سربراہی میں 3 رکنی تحقیقیاتی کمیٹی بھی تشکیل دے دی گئی ہے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز