پاکستان میں منگل کے روز عبوری وزیراعظم کا انتخاب، شاہد خاقان عباسی عبوری وزیراعظم بننا تقریبا طے

Jul 30, 2017 08:59 PM IST | Updated on: Jul 30, 2017 08:59 PM IST

اسلام آباد: پاکستان کے قانون ساز منگل کے روز سابق وزیراعظم نواز شریف کی جگہ پر جو سپریم کورٹ کے ذریعہ نااہل قرار دیئے جانے کے بعد اپنے عہدہ سے دست بردار ہوچکے ہیں، ایک نئے رہنما کا انتخاب کریں گے اور توقع ہے کہ برسراقتدار پارٹی کے قد آور رہنما شاہد خاقان عباسی عبوری وزیراعظم کی حیثیت سے اس وقت تک اپنی ذمہ داریاں سنبھالیں گے جب تک کہ خود مسٹر شریف کے بھائی اور پنجاب کے وزیراعلی شہباز شریف قومی اسمبلی کا ضمنی انتخاب جیت کر اس عہدہ کے اہل نہیں ہوجاتے۔

پاکستان کے صدر نے عبوری وزیراعظم کے انتخاب کے لئے منگل کو پارلیمنٹ کا خصوصی اجالس طلب کیا ہے۔ نواز شریف کی پاکستان مسلم لیگ نواز (پی ایم ایل۔ این) کو 342 رکنی پارلیمنٹ میں واضح اکثریت حاصل ہے جس کی 188 نشستیں اس کے پاس ہیں اور وہ یہ آسانی اپنی پسند کا رہنما منتخب کرسکتی ہے۔

پاکستان میں منگل کے روز عبوری وزیراعظم کا انتخاب، شاہد خاقان عباسی عبوری وزیراعظم بننا تقریبا طے

اقتدار کی بسرعت منتقلی سے ملک میں وہ سیاسی خلفشار کم ہوسکتا ہے جو سپریم کورٹ کے جمعہ کے روز کے فیصلہ سے پیدا ہوا ہے جس کی رو سے اپنی آمدنی کا ذریعہ نہ بتانے پر نواز شریف کو عہدہ کے لئے نااہل قرار دے دیا گیا تھا۔ عدالت نے نواز شریف اور ان کے کنبہ کے خلاف چھان بین کا بھی حکم جاری کیا تھا۔ عباسی نے آج شریف کے کاموں کو آگے بڑھانے کا عہد کیا۔ انہو نے کہا کہ مجھے امید ہے کہ مسٹر شریف کی پالیسیوں کو آگے لے جارہے ہیں۔ خدا میری مدد کرے گا۔ انہوں نے یہ بات نامہ نگاروں سے کہی جس سے ئی قیاس آرائی بھی ہونے لگی ہے کہ مسٹر شریف پس پردہ رہ کر حکومت چلاتے رہیں گے۔

وزیراعظم کے طور پر نواز شریف کی تیسری میعاد کار کے قبل از وقت خاتمہ اور موجودہ اتھل پتھل سے پاکستان میں جمہوریت کے بارے میں بھی سوالات اٹھنے لگے ہیں کیونکہ 1947 میں قیام پاکستان کے بعد سے اب تک کوئی بھی وزیراعظم اپنی میعاد کار مکمل کرنے میں کامیاب نہیں ہوا ہے۔ پی ایل ایل۔ این کے ایک سرکردہ عہدیدار اور شریف کے متعمد مفتاح اسماعیل نے کہا کہ ہم چاہتے ہیں کہ اقتدار کی منتقلی خوش اسلوبی کے ساتھ ہوا اور کوئی آئینی بحران پیدا نہ ہو۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز