پاکستان کو ستا رہا ڈر، حافظ سعید کے خلاف بھی اسامہ بن لادن جیسی کارروائی کرسکتا ہے امریکہ

Dec 22, 2017 10:01 PM IST | Updated on: Dec 22, 2017 10:01 PM IST

اسلام آباد : پاکستان کے ایوان بالا یعنی سینیٹ کی خارجہ امور کے بارے میں قائمہ کمیٹی کے ارکان نے خدشہ ظاہر کیا ہے کہ کہیں امریکہ دہشت گرد تنظیم جماعت الدعوۃ کے سرغنہ اور ممبئی حملوں کے ماسٹر مائنڈ حافظ سعید کے خلاف اسی طرح کی کارروائی نہ کر دے جس طرح کی اس نے القاعدہ لیڈر اسامہ بن لادن کے خلاف کی تھی۔ سینیٹر نزہت صادق کی سربراہی میں ہونے والے اس اجلاس میں سابق حکمراں جماعت پاکستان پیپلز پارٹی سے تعلق رکھنے والے سینیٹر فرحت اللہ بابر نے کہا کہ امریکہ نے حافظ سعید کے سر کی قیمت ایک کروڑ ڈالر مقرر کی ہے جبکہ اس سے پہلے اسامہ بن لادن کے سر کی قیمت ڈھائی کروڑ ڈالر مقرر کی تھی۔

بی بی سی کی رپورٹ کے مطابق فرحت اللہ بابر کا کہنا تھا کہ کہیں امریکہ جماعت الدعوۃ کے سربراہ حافظ سعید کے خلاف اس طرح کی یکطرفہ کارروائی نہ کر دے جس طرح اس نے ایبٹ آباد میں القاعدہ کے رہنما اسامہ بن لادن کے خلاف کی تھی‘۔

پاکستان کو ستا رہا ڈر، حافظ سعید کے خلاف بھی اسامہ بن لادن جیسی کارروائی کرسکتا ہے امریکہ

خیال رہے کہ کچھ عرصہ پہلے جب حافظ سعید کی نظر بندی ختم ہوئی تھی تو امریکہ نے پاکستان پر زور دیا تھا کہ وہ جماعت الدعوۃ کے سربراہ حافظ سعید کو دوبارہ گرفتار کر کے ان پر فردِ جرم عائد کرے۔ حافظ سعید اس سال جنوری سے گھر میں نظر بند تھے۔ 2012 کے بعد سے امریکہ نے حافظ سعید کے بارے میں اطلاعات فراہم کرنے پر ایک کروڑ ڈالر کا انعام مقرر کیا تھا۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز