پڑوسی عرب ممالک کے مطالبات پر قطر نے کویت کو اپنا جوابی خط سونپا

Jul 04, 2017 07:59 PM IST | Updated on: Jul 04, 2017 07:59 PM IST

دوحہ۔  سعودی عرب اور ديگر چار عرب ممالک کے ساتھ تعلقات کے بحران کا سامنا کرنے والے قطر نے ان ممالک کے مطالبات کے سلسلے میں کویت کو اپنا جوابی خط سونپ دیا ہے۔ کویت اس تنازعہ میں ثالثی کا کردار اداکر رہا ہے۔ میڈیا رپورٹوں کے مطابق قطر کے وزیر خارجہ شیخ محمد بن عبدالرحمان الثانی نے ملک کے امیر شیخ تمیم بن احمد الثانی کی دستی تحریری خط کویت کے شاہ شیخ صباح الاحمد الجابر الصباح کو پیر کے روز سونپ دیا ہے۔ فی الحال یہ پتہ نہیں چل پایا ہے کہ خط میں کیا کچھ لکھا گیا ہے۔ کویت کے امیر نے الجزیرہ ٹیلی ویژن کو بند کرنے، قطر میں ترک فوجی اڈے کو بند کرنے اور ایران سے تعلقات محدود کرنے سمیت پڑوسی ممالک کے 13 نکاتی مطالبات کو ماننے کے لئے 10 دن کی ڈیڈ لائن میں توسیع کرنے کی اپیل کی تھی جسے مانتے ہوئے انہوں نے اس میعاد کو کل 48 گھنٹوں یعنی تین جولائی تک بڑھا دیا تھا۔

سعودی عرب، متحدہ عرب امارات، بحرین اور مصر نے قطر پر دہشت گردی کو حمایت فراہم کرنے، اپنے اندرونی معاملات میں مداخلت کرنے اور ایران کے ساتھ اس کے تعلقات کے سلسلے میں پانچ جون کو اس سے تمام تعلقات توڑ لئے تھے۔ کویت اس معاملے میں ثالثی کر رہا ہے۔ اس سے پہلے مسٹر محمد بن عبد الرحمان الثانی نے اتوار کو روم میں صحافیوں سے خطاب کرتے ہوئے کہا تھا کہ ان کا ملک اب بھی بات چیت کرنے اور اپنے پڑوسی ممالک کے مختلف مسائل پر بحث کرنے کے لئے تیار ہے۔ تاہم، انہوں نے کہا تھا کہ " ان کے مطالبات کی فہرست قبول کرنے کے قابل نہیں ہے پھر بھی ہم بات چیت میں شامل ہونے کے لئے تیار ہیں، لیکن اس کے لئے مناسب حالات ہونے چاہئے" ۔ انہوں نے کہا تھا کہ قطر اپنی سرزمین میں ترکی کے فوجی اڈے اور الجزیرہ  ٹیلی ویژن چینل کو بند نہیں کرے گا۔

پڑوسی عرب ممالک کے مطالبات پر قطر نے کویت کو اپنا جوابی خط سونپا

قطر کے وزیر خارجہ شیخ عبدالرحمان آل ثانی، تصویر، رائٹرز

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز