ٹرمپ کی تنقید سے متاثر ماحول میں امریکی وزیر خارجہ پاکستان پہنچے

اسلام آباد۔ نئی افغان حکمت عملی کے اعلان کے دوران پاکستان پرامریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی تنقید سے متاثر ماحول میں امریکی وزیر خارجہ ریکس ٹلرسن انتہائی مختصر دورے پر پاکستان پہنچ گئے۔

Oct 24, 2017 08:59 PM IST | Updated on: Oct 24, 2017 08:59 PM IST

اسلام آباد۔ نئی افغان حکمت عملی کے اعلان کے دوران پاکستان پرامریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی تنقید سے متاثر ماحول میں امریکی وزیر خارجہ ریکس ٹلرسن انتہائی مختصر دورے پر پاکستان پہنچ گئے۔ وزیر خارجہ خواجہ محمد آصف کی دعوت پر اپنے اس دورے میں وہ پاکستان کی سیاسی اور فوجی قیادت سے ملاقات کریں گے۔ واضح رہے کہ ما بعد اوبامہ عہد میں خاص طور نئی افغان حکمت عملی کے اعلان کے دوران پاکستان پرامریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی تنقید سے امریکہ اور پاکستان کے تعلقات ایک بار پھر انتہائی نچلی سطح پر چلے گئے ہیں ۔ غالباً اس صورتحال کو محسوس کرتے ہوئے ہی کل مسٹر ٹلرسن نے افغانستان کے بگرام ایئر بیس پر صحافیوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ امریکہ، جنوبی ایشیا میں دہشت گردی کے خطرے سے بچنے کے لیے اپنے علاقائی اتحادیوں کے ساتھ مل کر کام کرنا چاہتا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ امریکہ نے پاکستان سے طالبان کو کمزور کرنے کے لیے کچھ مخصوص درخواستیں کیں ہیں جن پر دورہ اسلام آباد کے دوران پاکستانی قیادت سے بات چیت کی جائے گی۔ بگرام ایئر بیس پر افغان صدر اشرف غنی، چیف ایگزیکٹو عبداللہ عبداللہ اور دیگر اہم عہدیداران سے ملاقات کی۔ امریکی محکمہ خارجہ کی طرف سے واشنگٹن میں جاری ایک بیان کے مطابق امریکی وزیر خارجہ نے صحافیوں سے کہا ہے کہ ’ہم خطے کے دیگر ممالک سے مطالبہ کر رہے ہیں کہ وہ خطے میں کہیں بھی دہشت گردوں کو محفوظ پناہ گاہیں قائم نہ کرنے دیں جبکہ اس حوالے سے امریکہ اعلیٰ سطح پر پاکستان کے ساتھ کام کر رہا ہے‘۔

ٹرمپ کی تنقید سے متاثر ماحول میں امریکی وزیر خارجہ پاکستان پہنچے

امریکی وزیر خارجہ ریکس ٹلرسن: فائل فوٹو۔

ایک سوال کے جواب میں ریکس ٹلرسن کا کہنا تھا کہ امریکہ نے پاکستان سے طالبان اور دیگر دہشت گرد تنظیموں کو موصول ہونے والی حمایت کے خلاف کارروائی سے متعلق مخصوص درخواستیں کی ہیں۔

Loading...

Loading...

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز