برطانیہ کی آکسفورڈ کونسل نے آنگ سان سوچی سے فریڈم آف سٹی کا اعزاز واپس لیا

برطانیہ کی آکسفورڈ کونسل نے میانمار میں روہنگیا مسلمانوں کے قتل عام اور ان پر ڈھائے جانے والے مظالم کے خلاف سوچی کے ذریعہ چپی سادھے جانے پر ان سے فریڈم آف سٹی کا اعزاز واپس لے لیا ہے۔

Nov 28, 2017 12:45 PM IST | Updated on: Nov 28, 2017 12:46 PM IST

لندن۔ میانمار کی حکمراں جماعت کی سربراہ آنگ سان سوچی کو ایک اور جھٹکا لگا ہے۔ برطانیہ کی آکسفورڈ کونسل نے میانمار میں روہنگیا مسلمانوں کے قتل عام اور ان پر ڈھائے جانے والے مظالم کے خلاف سوچی کے ذریعہ چپی سادھے جانے پر ان سے فریڈم آف سٹی کا اعزاز واپس لے لیا ہے۔ برطانیہ کے دارالحکومت لندن میں کونسل کی فل ہاوس میٹنگ میں متقفہ طور پر آنگ سان سوچی سے یہ اعزاز واپس لینے کا فیصلہ کیا گیا۔

دی گارجین ڈاٹ کام کے مطابق، انیس سو ستانوے میں میانمار کی حکمراں کو اس اعزاز سے نوازا گیا تھا۔ اسی کے ساتھ آکسفورڈ کونسل سے اب ان کی تصویر بھی ہٹا لی گئی ہے۔ خیال رہے کہ پوپ فرانسس اپنے تین روزہ دورے پر پیر کے روز میانمار پہنچے تھے۔ پوپ فرانسس کے ساتھ اپنی ملاقات میں میانمار کی طاقتور فوج کے سربراہ نے کہا تھا کہ میانمار میں مذہبی بنیاد پر کوئی فرق وامتیاز نہیں پایا جاتا ہے۔ فوجی سربراہ کے اس بیان کے بعد ہی سوچی سے یہ اعزاز واپس لینے کا فیصلہ کیا گیا۔

برطانیہ کی آکسفورڈ کونسل نے آنگ سان سوچی سے فریڈم آف سٹی کا اعزاز واپس لیا

میانمار کی حکمراں جماعت کی سربراہ آنگ سان سوچی: رائٹرز، فائل فوٹو۔

قابل غور ہے کہ روہنگیا ئی اقلیتوں کے خلاف 25 اگست سے شروع ہونے والے تشدد کے بعد اب تک چھ لاکھ سے زائد لوگ اپنی جان بچا کر بنگلہ دیش پہنچ چکے ہیں۔ اقوام متحدہ نے روہنگیا مسلمانوں پر تشدد کو نسلی صفایا سے تعبیر کیا ہے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز