روہنگیا مسلمانوں پر زیادتی کے خلاف میانمار کی فوج کی تفتیش کا آغاز

ینگون۔ میانمار میں فوج نے روہنگیا مسلمانوں کے خلاف کارروائی کے دوران فوجیوں کی زیادتیوں کی داخلی جانچ شروع کردی ہے۔

Oct 14, 2017 10:45 AM IST | Updated on: Oct 14, 2017 10:45 AM IST

ینگون۔ میانمار میں فوج نے روہنگیا مسلمانوں کے خلاف کارروائی کے دوران فوجیوں کی زیادتیوں کی داخلی جانچ شروع کردی ہے۔ کمانڈر ان-چیف کی آفس نے کل بتایا کہ اس کیلئے لیفٹنٹنٹ جنرل ایئے ون کی قیادت میں ایک کمیٹی تشکیل دی گئی ہے جس نے اپنا کام شروع کردیا ہے۔ سینئر جنرل من آنگ ہلائنگ نے فیس بک پر ایک بیان پوسٹ کیا ہے جس کے مطا بق کمیٹی تفتیش کرے گی۔’’ کیا فوجیوں نے ضابطہ اخلا ق پر عمل کیا ہے ؟ کیا انہوں نے مہم کے دوران صحیح طریقے سے احکامات پر عمل کیا ہے؟اس کے بعد (کمیٹی)پوری تفصیلات جاری کرے گی‘‘۔

قابل غور ہے کہ میانمار سے بنگلہ دیش نقل مکانی کرنے والے بیشتر روہنگیا مسلمانوں نے میانمار کی فوج پر قتل،عصمت دری اور آگ لگانے کا الزام لگایا ہے،لیکن وہاں کی فوج نے ان سبھی الزامات کو خارج کیا ہے اور کہا کہ روہنگیائی مسلمانوں کے خلاف کارروائی بودھ اکثریت والے میانمار کے آئین کے مطابق کی گئی ہے۔

روہنگیا مسلمانوں پر زیادتی کے خلاف میانمار کی فوج کی تفتیش کا آغاز

میانمار کے مرکزی وزیر برائے سماجی بہبود ، راحت رسانی و بازآبادکاری مسٹر وین میاٹ اویا نے جنیوا میں پناہ گزین کمیشن کی ایگزیکٹو کمیٹی کو بتایا کہ ان کی حکومت کی اولین ترجیح میانمار سے در بدر ہوکر بنگلہ دیش جانے والے روہنگیا پناہ گزینوں کو وطن واپس لانا ہے۔ : رائٹرز۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز