جب تک روہنگیا مسلمان اپنے ملک واپس چلے نہیں جاتے تب تک ہم ان کے ساتھ کھڑے رہیں گے: حسینہ

Sep 13, 2017 11:24 AM IST | Updated on: Sep 13, 2017 11:24 AM IST

ڈھاکہ۔ منگل کو بنگلہ دیش کی وزیر اعظم شیخ حسینہ نے جنوب مشرقی علاقے کوکس بازار کا دورہ کیا۔ اس دورہ کے دوران انہوں نے الزام لگایا  کہ میانمار روہنگیا مسلمانوں پر مظالم ڈھا رہا ہے اور بنگلہ دیش کسی قسم کی نا انصافی کو برداشت نہیں کرے گا۔ انہوں نے میانمار حکومت سے یہ بھی کہا کہ وہ اپنے ان شہریوں کو واپس لے جائے جو تشدد کی وجہ سے بھاگ کر بنگلہ دیش پہنچے ہیں۔ خیال رہے کہ کوکس علاقے میں میانمار سے بنگلہ دیش ہجرت کرنے والی روہنگیا مسلم اقلیت کی بڑی تعداد پناہ لیے ہوئے ہے۔

شیخ حسینہ نے کہا کہ ڈھاکہ حکومت روہنگیا بحران کا معاملہ اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے اجلاس میں اٹھائے گی، جو اگلے ہفتے سے نیو یارک میں شروع ہو رہا ہے۔ ان کا کہنا تھا، ’’میانمار کو اپنے لوگوں کی جانب سے شروع کیے گئے مسئلے کو خود حل کرنا ہو گا۔‘‘

جب تک روہنگیا مسلمان اپنے ملک واپس چلے نہیں جاتے تب تک ہم ان کے ساتھ کھڑے رہیں گے: حسینہ

شیخ حسینہ نے کہا کہ ڈھاکہ حکومت روہنگیا بحران کا معاملہ اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے اجلاس میں اٹھائے گی، جو اگلے ہفتے سے نیو یارک میں شروع ہو رہا ہے۔: تصویر، اے پی۔

روہنگیا پناہ گزین کیمپوں کے دورے کے بعد حسینہ نے کہا، "ہم پڑوسی ممالک میں امن اور دوستانہ تعلقات چاہتے ہیں، لیکن ہم کسی بھی ناانصافی کی اجازت نہیں دیں گے اور اسے قبول بھی نہیں کرسکتے۔ ہم اس کی مخالفت جاری رکھیں گے۔ انہوں نے پناہ گزینوں کو یقین دہانی کرائی کہ بنگلہ دیش ان لوگوں کو انسانی امداد فراہم کرے گا۔ بنگلہ دیشی وزیر اعظم نے کہا کہ جب تک روہنگیا مسلمان اپنے ملک واپس چلے نہیں جاتے تب تک ہم ان کے ساتھ کھڑے رہیں گے۔

ڈی ڈبلیو ڈاٹ کام نے بنگلہ دیشی ذرائع ابلاغ کے حوالہ سے لکھا ہے کہ تین لاکھ سے زائد روہنگیا کے آنے کے بعد مہاجر کیمپوں ميں گنجائش ختم ہو چکی ہے اور ہزاروں روہنگیا سڑکوں کے کنارے کھلے آسمان تلے گزر بسر کر رہے ہیں۔ اس کے علاوہ کچھ مہاجرین نے جنگلوں اور قریبی پہاڑوں پر بھی پناہ لی ہوئی ہے۔ ذرائع نے بتایا ہے کہ ہزاروں کی تعداد میں روہنگیا بنگلہ دیش کے راستے میں ہیں۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز