بغاوت کا اندیشہ: نئے ولی عہد کے لئے سابق ولی عہد شاہی محل میں قید؟

Jun 29, 2017 04:04 PM IST | Updated on: Jun 29, 2017 04:05 PM IST

ریاض۔ سعودی عرب میں ولی عہد کے عہدے سے ہٹائے گئے محمد بن نایف کو جدہ شہر میں واقع ان کے شاہی محل میں بند کر کے رکھا گیا ہے۔ اتنا ہی نہیں،ان کے ملک چھوڑنے پر بھی پابندی لگا دی گئی ہے۔ نیو یارک ٹائمز کی ایک رپورٹ کے مطابق، یہ قدم سعودی شاہی تخت کے اگلے جانشین محمد بن سلمان کے خلاف کسی بھی قسم کی بغاوت کو روکنے کے لئے اٹھایا گیا ہے۔ محمد بن سلمان مملکت کے فرمانروا سلمان کے بیٹے ہیں۔ تاہم، سعودی عرب کے افسر نے اس رپورٹ کی تردید کی ہے۔

نیویارک ٹائمز کی رپورٹ میں سعودی عرب سے وابستہ امریکہ کے ایک سینئر افسر کا بیان نقل کیا گیا ہے۔ انہوں نے کہا، "یہ ایک اشارہ ہے کہ محمد بن سلمان کسی طرح کی مخالفت نہیں چاہتے ہیں۔ وہ خاندان میں کوئی باہمی تنازعہ نہیں چاہتے ہیں۔ وہ بغیر کسی اختلاف کے شاہی تخت پر بیٹھنا چاہتے ہیں۔ حالانکہ ابھی تک محمد بن نایف نے ان کے خلاف کوئی سازش نہیں رچی ہے۔ اس افسر نے بتایا کہ امریکہ سعودی عرب کی وزارت داخلہ سے رابطہ میں ہے، حالانکہ وہ محمد بن نایف سے رسمی رابطے میں نہیں ہے۔ جبکہ سعودی عرب کے ایک افسر نے اس خبر کی تردید کی ہے۔

بغاوت کا اندیشہ: نئے ولی عہد کے لئے سابق ولی عہد شاہی محل میں قید؟

محمد بن نایف: فائل فوٹو، رائٹرز

بتاتے چلیں کہ مغربی ممالک میں نائف کی شبیہ بہت اچھی مانی جاتی ہے۔ القاعدہ کے چیلنج سے نمٹنے کے لئے انہوں نے جو کوششیں کیں، اس کے لئے مغربی ممالک میں ان کی بہت تعریف ہوئی تھی۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز