سعودی عرب نے ایران کے ساتھ رشتوں میں گرمجوشی سے کیا انکار

Sep 06, 2017 07:30 PM IST | Updated on: Sep 06, 2017 07:30 PM IST

جدہ۔ سعودی عرب کے وزیر خارجہ عادل الجبیر نے اپنے علاقائی حریف ایران کے ساتھ اپنے تعلقات میں کسی طرح کی گرمجوشی سے انکار کیا ہے۔ سعودی عرب کا یہ ردعمل دراصل تہران کی طرف سے ریاض کو اس کے سالانہ حج سفر کے بہترین انتظام کے لئے شکریہ ادا کئے جانے کے پس منظر میں آیا ہے۔ الجبیر نے لندن میں ایک پریس ڪانفرنس میں کہا کہ اگر ایران سعودی عرب کے ساتھ اچھے تعلقات چاہتا ہے تو اسے اپنی پالیسیوں میں تبدیلی لانا ہو گی۔ اسے بین الاقوامی قانون کا احترام کرنا ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ حج ایک مذہبیی فریضہ ہے، اس کا سیاست سے کوئی لینا دینا نہیں ہے۔

جنوری 2016 میں ایران کے لوگوں کے ذریعہ تہران میں سعودی عرب کے سفارت خانے پر حملہ کرنے کے بعد دونوں ملکوں کے درمیان سفارتی تعلقات خراب ہوئے ہیں۔ اس کے باوجود پچھلے ہفتہ میں تقریبا 86 ہزار ایرانی عازمین نے حج کے فرائض انجام دئیے۔ چند سال قبل مچی بھگدڑ میں سینکڑوں ایرانی باشندوں سمیت 2300 عازمین کی موت کے بعد سلامتی کے خدشات سے منسلک مذاکرات کامیاب نہیں ہو سکے تھے۔ اس کی وجہ سے سال 2016 میں ایرانی عوام حج میں حصہ نہیں لے پائے تھے۔

سعودی عرب نے ایران کے ساتھ رشتوں میں گرمجوشی سے کیا انکار

سعودی عرب کے وزیر خارجہ عادل الجبیر: فائل فوٹو، رائٹرز۔

منگل کو ایران نے اس سال کامیاب طور پر حج کرانے کے لئے سعودی عرب کا شکریہ ادا کیا اور کہا کہ اس سے مذاکرات کے راستے کھل گئے ہیں۔ سرکاری نشریہ کے مطابق، تہران میں حج تنظیم کے سربراہ علی غازی اسکر نے کہا "انہوں نے ایرانی عازمین کے لئے ایک نیا رخ اپنایا۔ انہوں نے کہا کہ یہ دونوں فریقوں کے لئے ایک موقع ہے کہ وہ دیگر شعبوں میں اپنے دو طرفہ معاملات کو سلجھائیں۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز