قطر ریاض سمجھوتہ میں کئے وعدوں کو پورا اور دہشت گردوں کی مالی معاونت بند کرے ، سعودی وزیر خارجہ کا اقوام متحدہ میں خطاب

سعودی عرب کے وزیر خارجہ عادل الجبیر نے دہشت گردی مخالف گروپ چار کے اس موقف کا اعادہ کیا ہے کہ قطر الریاض سمجھوتے میں کیے گئے وعدوں کی پاسداری کرے اور خطے میں دہشت گردی کے لیے مالی معاونت اور دوسرے ممالک کے داخلی امور میں مداخلت کا سلسلہ بند کردے ۔

Sep 24, 2017 02:27 PM IST | Updated on: Sep 24, 2017 02:27 PM IST

نیویارک : سعودی عرب کے وزیر خارجہ عادل الجبیر نے دہشت گردی مخالف گروپ چار کے اس موقف کا اعادہ کیا ہے کہ قطر الریاض سمجھوتے میں کیے گئے وعدوں کی پاسداری کرے اور خطے میں دہشت گردی کے لیے مالی معاونت اور دوسرے ممالک کے داخلی امور میں مداخلت کا سلسلہ بند کردے ۔وہ نیویارک میں ہفتے کے روز اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے بہترویں سالانہ اجلاس سے خطاب کررہے تھے۔

وزیر خارجہ عادل الجبیر نے اپنی تقریر میں عرب ممالک کے قطر کے ساتھ جاری تنازع ، مسئلہ فلسطین ،یمن میں جاری بحران اور میانمار میں روہنگیا مسلمانوں کے خلاف برمی سکیورٹی فورسز کی انسانیت سوز کارروائیوں کے حوالے سے اظہار خیال کیا ہے۔العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق سعودی وزیر خارجہ نے عالمی لیڈروں کے اجتما ع سے تقریر میں دوٹوک الفاظ میں کہا کہ قطر کی جانب سے دہشت گرد گروپوں کی حمایت سے خطہ عدم استحکام سے دوچار ہوا ہے۔اس کے برعکس سعودی عرب دہشت گردی اور انتہا پسندی کے خاتمے کے لیے عالمی کوششوں کی حمایت کرتا ہے اور یہ حمایت جاری رکھے گا۔

قطر ریاض سمجھوتہ میں کئے وعدوں کو پورا اور دہشت گردوں کی مالی معاونت بند کرے ، سعودی وزیر خارجہ کا اقوام متحدہ میں خطاب

انھوں نے کہا کہ حوثی ملیشیا نے ایران کی مدد سے یمنی دارالحکومت صنعاء اور دوسرے علاقوں پر قبضہ کیا تھا اور یمن کی صورت حال پورے خطے کے لیے ہی خطرے کا موجب ہے۔تاہم انھوں نے واضح کیا کہ صرف کسی فوجی حل سے یمن میں جاری بحران کا خاتمہ نہیں ہوگا۔انھوں نے مشرقِ وسطیٰ کے دیرینہ تنازع کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ ’’ ہم مسئلہ فلسطین کے دوریاستی حل میں یقین رکھتے ہیں اور ایک آزاد فلسطینی ریاست کا قیام چاہتے ہیں جس کا دارالحکومت بیت المقدس ہوگا‘‘۔

انھوں نے میانمار حکومت کی روہنگیا مسلمانوں کے خلاف جبر وتشدد کی پالیسی کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ یہ سلسلہ بند کیا جائے۔ واضح رہے کہ برمی سکیورٹی فورسز کی روہنگیا اقلیت کے خلاف 25 اگست سے جاری تشدد آمیز کارروائیوں کے نتیجے میں سیکڑوں افراد ہلاک اور چار لاکھ سے زیادہ اپنا گھر بار چھوڑ کر اور جانیں بچا کر پڑوسی ملک بنگلہ دیش کے سرحدی علاقے کی جانب جاچکے ہیں اور وہاں عارضی خیمہ بستیوں میں مقیم ہیں۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز