یونیفارم نہ پہننے پر ٹیچر کی طالبہ کو لڑکوں کے بیت الخلا کے سامنے کھڑا کرنے کی سزا پر رشتہ داروں کا احتجاج

Sep 11, 2017 10:45 PM IST | Updated on: Sep 11, 2017 10:45 PM IST

حیدرآباد: اسکول یونیفارم نہ پہننے پر ایک 11سالہ طالبہ کو لڑکوں کے بیت الخلا کے سامنے کھڑا کرنے کی غیر انسانی سزا دی گئی۔تلنگانہ کے ضلع سنگاریڈی کے رامچندراپورم کے ایک پرائیویٹ اسکول میں یہ واقعہ پیش آیا۔اس لڑکی کو پانچ منٹ تک یہ سزا دی گئی۔پی ای ٹی ٹیچر نے اس کو یہ سزا دی ۔اس واقعہ سے خوفزدہ ہوکر لڑکی نے اسکول جانے سے انکار کردیا ۔

انسانی حقوق کمیشن اور بچوں کے حقوق کے تحفظ کے محکمہ نے اس معاملہ کو کافی سنجیدگی سے لیا ہے۔اس واقعہ کے خلاف طالبہ کے والدین اور رشتہ داروں نے شدید احتجاج کیا اور اسکول کے فرنیچر کو نقصان پہنچایا ۔انہوں نے پی ای ٹی ٹیچر کے نامناسب رویہ کی مذمت کی اس واقعہ پر فوری ردعمل ظاہر کرتے ہوئے تلنگانہ کے وزیر انفارمیشن ٹکنالوجی کے ٹی راما راو نے اپنے ٹوئیٹر پیام میں اس واقعہ کو مضحکہ خیز قرار دیا۔

یونیفارم نہ پہننے پر ٹیچر کی طالبہ کو لڑکوں کے بیت الخلا کے سامنے کھڑا کرنے کی سزا پر رشتہ داروں کا احتجاج

انہوں نے کہاکہ اسکول انتظامیہ کے خلاف سخت کارروائی کرنے کے لئے اس مسئلہ کو نائب وزیراعلی کے ساتھ اٹھایا جائے گا۔دوسری طرف اس واقعہ پر طلبہ تنظیموں نے شدید احتجاج کیااوراسکول انتظامیہ کے خلاف کارروائی کرنے کامطالبہ کیا۔ اساتذہ اور پرنسپل نے ان احتجاجیوں کو سمجھانے کی کوشش کی اور ان کو احتجاج ختم کرنے کی ترغیب دی جو لاحاصل رہی۔ اس احتجاج کے نتیجہ میں اسکول کے قریب کشیدگی دیکھی گئی۔

بتایاجاتا ہے کہ اس واقعہ میں ملوث ٹیچر کو معطل کردیاگیا۔دریں اثنا تلنگانہ کے محکمہ تعلیمات کے افسروں نے اس واقعہ کا سخت نوٹ لیتے ہوئے اسکول کو نوٹس جاری کی ۔یہ نوٹس نائب وزیراعلی و وزیر تعلیم کڈیم سری ہری کی ہدایت پر جاری کی گئی ہے۔اسکول انتطامیہ نے اس واقعہ پر ردعمل ظاہر کرتے ہوئے کہاکہ اس لڑکی کو لڑکوں کے بیت الخلا کے قریب نہیں ٹہرایا گیا بلکہ کلاس روم کے باہر ٹہرا گیا ۔ اس کے والدین اور رشتہ دار ا س واقعہ کو غلط انداز میں پیش کر رہے ہیں۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز