بنگلور میں گئو کشی کی رپورٹ درج کرانے پر انیمل رائٹس خاتون کارکن کے ساتھ مبینہ طور پر مار پیٹ

Oct 16, 2017 06:17 PM IST | Updated on: Oct 16, 2017 06:17 PM IST

بنگلورو: بنگلور میں گئو کشی کی رپورٹ درج کرانے پر ایک انیمل رائٹس کارکن کے ساتھ مار پیٹ کا معاملہ سامنے آیا ہے۔ نندنی نیرج نام کی ایک 45 سالہ خاتون نے پولیس میں درج اپنی شکایت میں دعوی کیا ہے کہ ہفتہ کی رات کو گئو کشی میں شامل لوگوں نے ان کے ساتھ مارپیٹ کی ۔ ہفتہ کی شام کو ہی نندنی نے ان افراد کے خلاف پولیس میں شکایت درج کرائی تھی۔

خیال رہے کہ نندنی بنگلورو میں ایک ملٹی نیشنل کمپنی میں ایگزکٹیو کے طور پر کام کرتی ہے۔ نندنی کے مطابق اس نے اولاہلی کے نزدیک ایک سلاٹر ہاوس میں کئی جانوروں کو بندھا ہوا دیکھا ، جس پر اس کو شک ہوا کہ یہاں غیر قانونی کام کیا جارہا ہے اور اس نے اس سلسلہ میں پولیس کو خبر دی ۔

بنگلور میں گئو کشی کی رپورٹ درج کرانے پر انیمل رائٹس خاتون کارکن کے ساتھ مبینہ طور پر مار پیٹ

پولیس نے نندنی کی شکایت درج کرلی اور اس سے گھر جانے کیلئے کہا ۔ اس کے بعد نندنی نے بتایا کہ پولیس نے کہا کہ جائے واردات پر 15، 20 پولیس اہلکار موجود ہیں ۔ تاہم گھر جانے کی بجائے نندنی دو کانسٹیبلوں کے ساتھ سلاٹر ہاوس کی طرف چلی گئی ۔ نندنی کا کہنا ہے کہ اس کے ساتھ جانے والوں کے علاوہ وہاں پر کوئی اور پولیس اہلکار موجود نہیں تھا۔

نندنی کے الزامات کے مطابق سلاٹر ہاوس کے پاس کافی تعداد میں لوگ جمع تھے اور بھیڑ نے ان پر حملہ کردیا اور اس دوران دونوں کانسٹیبل وہاں سے فرار ہوگئے۔ نندنی کے مطابق وہاں ایک بھی پولیس اہلکار نہیں تھا ، جس کو دیکھ کر وہ چونک گئی ۔ بھیڑ نے جب حملہ کردیا تو اس کے ساتھ آئے دونوں کانسٹیبل بھی وہاں سے فرار ہوگئے۔

ادھر پولیس کا کہنا ہے کہ اس نے جائے واردات سے تین گایوں کو برآمد کیا ہے اور پروینشن آف کاو سلاوٹر اور کیٹل پروینشن ایکٹ کے تحت ماملہ درج کرلیا گیا ہے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز