تلنگانہ : عادل آباد میں فرقہ وارانہ تشدد ، مسلمانوں کی دکانوں میں توڑ پھوڑ ، پولیس اہلکاروں پر پتھراو

May 08, 2017 09:43 PM IST | Updated on: May 08, 2017 09:43 PM IST

حیدرآباد: عادل آباد ضلع کے اتنور منڈل میں ایک وہاٹس ایپ میسج کو لے کر دو فرقہ کے لوگ آمنے سامنے آگئے۔ پرتشدد ہجوم نے پولیس پر بھی پتھراؤ کیا۔ فی الحال علاقے میں کثیر تعداد میں پولیس فورس کو تعینات کر دیا گیا ہے۔ میڈیا کی خبروں مطابق علاقہ میں پہلے ایک کمیونٹی خاص کے خلاف وہاٹس ایپ پر میسج شیئر کیا گیااور دیکھتے ہی دیکھتے یہ میسج وائرل ہو گیا، جس کے بعد رد عمل کے طور پر اس کمیونٹی کے کچھ نوجوانوں نے بھی دوسرے کمیونٹی کو نشانہ بناتے ہوئے ایک اور آڈیو میسج وائرل کیا۔

اس کے بعد ہندو واہنی اور وشو ہندو پریشد کے لوگ تشدد پر اتر آئے اور مسلمانوں کی تقریبا 16 دکانوں کا تالا توڑ کر توڑ پھوڑ کی۔کریم نگر رینج کے ڈی آئی جی روی ورما کے مطابق 'دونوں ہی گروپوں نے پولیس پر پتھراؤ کیا۔ ایک گروہ نے کلپ پوسٹ کرنے والے کی گرفتاری کا مطالبہ کرتے ہوئے پتھراؤ کیا ، تو دوسرے گروپ نے دکانیں جلانے والوں کے خلاف کارروائی کے مطالبہ کو لے کر اپنا غصہ ظاہر کیا۔

تلنگانہ : عادل آباد میں فرقہ وارانہ تشدد ، مسلمانوں کی دکانوں میں توڑ پھوڑ ، پولیس اہلکاروں پر پتھراو

file photo

انہوں نے بتایا کہ 'پتھراؤ میں عادل آباد کے پولس سپرنٹنڈنٹ ایم سرینواس اور دیگر کو کو چوٹیں آئیں ہیں.۔ روی ورما کے مطابق کہ پولیس اہلکاروں پر پتھراؤ کے سلسلہ میں 18 افراد کو گرفتار کیا گیا ہے۔ حالات اب قابو میں ہیں۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز