بیدر ضلع انتظامیہ کی اقلیتی مسائل سےعدم دلچسپی کا ثبوت ہے مولانا آزاد بھون کی تعمیر میں تاخیر

Aug 02, 2017 11:35 PM IST | Updated on: Aug 02, 2017 11:35 PM IST

بیدر : ضلع بیدر کے اقلیتوں کے مسائل سے ضلع انتظامیہ اور صاحب اقتدار حضرات کو کوئی دلچسپی نہی ہے ۔ یہاں کی اقلیتیں آئے دن کسی نا کسی مسائل کا شکار ہوتی ہیں ۔تاہم ان کا کوئی پرسان حال نہیں ہے۔کرناٹک حکومت نے تین سال قبل ہرضلع مرکز پر ایک مولانا آزاد بھون کی تعمیر کا اعلان کیا اور اس کی تعمیر کے لیے ایک ایک کروڑ رقم منظور کرکے ضلع ڈپٹی کمشنر کے اکاؤنٹ میں جمع کر ادی ۔ یہ رقم بیدرکے لیے بھی منظور ہوئی ۔ ریاست کے دیگر اضلاع میں اس کام کا آغاز بھی ہوگیا اور عمارت کا افتتاح بھی ، تاہم آج تک بیدر ضلع میں کام کا آغاز ہی نہیں ہوا ۔

مولانا آزاد بھون میں تین دفاتر قائم ہونے ہیں، جن میں اقلیتی فلاح وبہبود، اقلیتی فائنانشیل کارپوریشن اور وقف بورڈ ۔ اب تک یہ دفاتر قدیم سرکاری دواخانہ میں قائم تھے۔ اب اس کی عمارت کو منہدم کیا جا رہا ہے تو اب ان دفاتر کو کسی اور مقام پر منتقل کیا جائے گا ۔ ان دنوں اقلیتی طلبہ کی اسکالرشپ کی درخواستیں لی جاتی ہیں اور ادھر اقلیتی فائنانشیل کارپوریشن میں قرض کے لیے درخواستیں حاصل کرنے کا وقت ہے ۔

بیدر ضلع انتظامیہ کی اقلیتی مسائل سےعدم دلچسپی کا ثبوت ہے مولانا آزاد بھون کی تعمیر میں تاخیر

ادھر ڈپٹی کمشنر بیدر کا کہنا ہےکہ بھون کی تعمیر کے لیے زمین کی نشاندہی کرلی گئی ہے اور بہت جلد ہی کام کا آغاز بھی ہو جائے گا۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز