کرناٹک کے رائچور میں ڈینگو کے قہر سے عوام میں خوف ودہشت کا ماحول

Apr 01, 2017 05:44 PM IST | Updated on: Apr 01, 2017 05:44 PM IST

کرناٹک۔ ایک طرف آگ برساتی گرمی دوسری طرف ڈینگو کے قہر سے عوام میں خوف ودہشت  کا ماحول ہے ۔  کرناٹک کے  پسماندہ ضلع رائچور میں روز بروز ڈینگو کے کیس میں اضافہ ہوتا جا رہا ہے اور لوگ پریشان ہیں لیکن سرکاری حکام کی خاموشی برقرار ہے۔کرناٹک کے رائچور ضلع میں تیزی کے ساتھ بڑھتی وبائی بخار کی وجہ سے خوف وہراسانی کا ماحول پیدا ہوگیا ہے بالخصوص بخار کی حالت میں اسپتالوں کو آنے والے مریض کافی پریشان ہیں۔ وبائی بخار ڈینگوضلع کے اکثرعلاقوں میں اپنی گرفت مضبوط کررہا ہے۔ ضلع دیو سگور اور کاڈلورکے علاوہ دیگر آس پاس کے دیہی علاقوں میں تقریبا 30 افراد ڈینگو سے متاثر ہوئے ہیں جبکہ رائچور شہرمیں تقریباً دس سے زائد ڈینگو سے متاثرہ لوگوں کی نشاندہی کی گئی ہے۔ ڈاکٹروں اورطبی عملے نے متاثرہ افراد کے خون کے نمونے حاصل کرلیے ہیں اور ابھی رپورٹ کا انتظار ہے۔

عوام کے مطابق ڈینگو بخار اور دیگر وبائی امراض کے بڑھتے اثر کی وجہ سے ریاستی محکمہ صحت کی کوتاہی ہے اگر حالات اس طرح کے رہیں گے تو ریاستی محکمہ صحت اور ضلع انتظامیہ کی مزید مشکلات میں اضافہ ہونے کا اندیشہ ہے۔ مقامی سماجی کارکن ڈینگو پر قابو پانے کے لیے جنگی خطوط پر اقدامات کرنے کی مانگ کررہے ہیں۔ اطلاعات کے مطابق ڈینگو سے متاثر مریض شہر کے مختلف اسپتالوں میں زیر علاج ہیں مگر انہیں درکار سہولتیں سرکاری اسپتالوں میں نہیں مل رہی ہیں۔ اس وجہ سے یہ مریض نجی اسپتالوں میں علاج کے لیے مجبور ہیں۔ چار سے بیس سال کی عمرکے لوگوں میں ڈینگو کا مرض تیزی کے ساتھ پھیل رہا ہے ۔علاج مہنگا ہونے کی وجہ سے مریضوں کو کئی دشواریوں کا سامنا کرنا پڑرہا ہے جبکہ گورنمنٹ اسپتالوں کی انتظامیہ ڈینگو کا مکمل علاج کرنے سے قاصر ہے کیونکہ ان اسپتالوں میں عملے کی کمی اور ادویات کی قلت ہے۔

کرناٹک کے رائچور میں ڈینگو کے قہر سے عوام میں خوف ودہشت کا ماحول

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز