عیدگاہ جدید ٹرسٹ بورڈ کو بڑی کامیابی ، کروڑوں روپے کی وقف املاک ہتھیانے کی کوشش ناکام

Oct 19, 2017 02:29 PM IST | Updated on: Oct 19, 2017 02:29 PM IST

بنگلورو : بنگلورو میں کروڑروں روپئےکی وقف ملکیت کو ہتھیانے کی کوشش ناکام ہوئی ہے۔ مسلم طبقہ کے ہی چند افراد وقف کی تقریبا 4 ایکڑ اراضی کو ہڑپنے کی کوشش کررہے تھے ۔ لیکن عدالت نےعیدگاہ جدید ٹرسٹ بورڈ کے حق میں فیصلہ سنایا ہے ۔

بنگلورو کے ایس کے گارڈن میں موجود مسجد تقویٰ اور دینی مدرسہ کی عمارت کو پانچ سال قبل منہدم کرنےکا حکم جاری کیا گیا تھا۔ مقامی عدالت نے طاہرہ بانو اوران کے بچوں کی درخواست پریہ حکم جاری کیا تھا۔ طاہرہ بانو کا دعوی تھا کہ مسجد اور مدرسہ کی 4 ایکڑ 20 گنٹہ زمین ان کی نجی ملکیت ہے۔ لہذا زمین کو ان کے حوالے کرنے کے ساتھ مسجد اور مدرسہ کی عمارتوں کو منہدم کیاجائے۔

عیدگاہ جدید ٹرسٹ بورڈ کو بڑی کامیابی ، کروڑوں روپے کی وقف املاک ہتھیانے کی کوشش ناکام

عدالت کے فیصلہ کے بعد مقامی مسلمان کافی پریشان تھے۔ طاہرہ بانو کے حق میں سنائے گئے فیصلہ کوعیدگاہ جدید ٹرسٹ بورڈ نےسٹی سول کورٹ میں چیلنج کیا۔ پانچ سال کی قانونی جدوجہد کے بعد عدالت نے طاہرہ بانوکے دعوی کو مسترد کردیا اوراسی ماہ کی چھ تاریخ کو عیدگاہ جدید ٹرسٹ بورڈ کے حق میں فیصلہ سنایا۔

عیدگاہ جدید ٹرسٹ کے ارکان کا کہنا کہ تمام وقف اداروں کو چوکنا رہنا چاہئے۔ وقف جائیداد کے سلسلے میں تمام ضروری دستاویزات موجود رہنے چاہئیں کیونکہ فرضی دستاویزات کے ذریعہ زمینوں کو ہڑپنے کی کوششیں کی جا رہی ہیں۔

خیال رہے کہ بنگلورو کے قلب میں واقع عیدگاہِ جدید اور قبرستانِ جدید کل17ایکڑ وقف اراضی پر محیط ہے۔ مسجد تقوی اور مدرسہ کی عمارت اسی وقف ملکیت کا حصہ ہے۔ عدالت کے تازہ فیصلہ کےبعد نہ صرف عیدگاہ جدید ٹرسٹ بلکہ مقامی مسلمان بھی راحت اور خوشی محسوس کر رہے ہیں۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز